کورونا کی دوسری لہر سے نمٹنے کے لیے خیبرپختونخوا حکومت تیار ہے

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin

خیبرپختونخوا حکومت کورونا کی دوسری لہر سے نمٹنے کے لیے تیار ہے اور حفاظتی اقدامات اٹہانے کے لیے مشاورت کر لی ہے۔

وزیرِ اعظم عمران خان سوات میں خیبر پختونخوا حکومت کے فلیگ شپ منصوبے صحت سہولت پروگرام کا افتتاح کریں گے جس کے تحت صوبے کے ہر خاندان کو سالانہ 10 لاکہ تک مفت علاج کی سہولت میسر ہوگی۔

31 جنوری 2021تک صوبے کی تمام آبادی اس پروگرام سے مستفید ہو جائے گی۔

ان خیالات کا اظہار خیبرپختونخوا کے وزیر صحت و خزانہ تیمور سلیم خان جھگڑا اور وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا کے معاون خصوصی برائے اطلاعات و اعلیٰ تعلیم کامران خان بنگش نے پشاور میں کورونا کی دوسری لہر، صوبائی ٹاسک فورس برائے انسداد کورونا اور صحت کارڈ کے حوالے سے میڈیا بریفنگ میں کیا۔

کامران خان بنگش کا کہنا تہا کہ صوبائی حکومت نے تمام اداروں کے تعاون سے کورونا کی پہلی لہر پر قابو پایا جبکہ وزیرِ اعلیٰ محمود خان کی قیادت میں، اپنی محنت و لگن سے اس کی دوسری لہر پر بھی قابو پا لیں گے۔

وزیرِ اعلیٰ خیبرپختونخوا کی صدارت میں ہونے والے صوبائی ٹاسک فورس برائے انسداد کورونا کے اجلاس میں احتیاطی تدابیر اور آئندہ کے لائحہ عمل پر غور کیا گیا۔

اس سلسلے میں پارکس اور تفریحی مقامات کو شام 6 بجے بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اسی طرح شادی ہالز، بازار دیگر تجارتی مراکز رات 10 بجے بند کرنے پر تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔

کامران بنگش کا کہنا تھا کہ کوشش ہو گی کہ صوبے میں اقتصادی سرگرمیاں متاثر نہ ہوں تاہم اس مقصد کے حصول کے لیے عوام کا تعاون درکار ہوگا۔

اس موقع پر صوبائی وزیر صحت و خزانہ تیمور جھگڑا کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس ایک حقیقت ہے۔ میں خود اور کامران بنگش بھی اس سے متاثر ہو چکے ہیں۔ اس وباء اور اس کی تباہ کاریوں کو سنجیدہ لینا ہو گا۔

صوبائی وزیر نے کہا کہ حکومت کی وباء کے پہلے دن سے ہی کوشش رہی ہے کہ عوام کو حقیقی صورت حال سے آگاہ کیا جائے۔ صحت کارڈ پروگرام کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ کل بروز جمعہ وزیراعظم پاکستان عمران خان سوات میں خیبر پختونخوا حکومت کے فلیگ شپ منصوبے کا افتتاح کریں گے۔

اس منصوبے کے تحت ملاکنڈ ڈویژن کے 6 اضلاع اپر و لوئر دیر، اپر و لوئر چترال، ملاکنڈ اور سوات کے عوام کو صحت کی مفت علاج کی سہولت فراہم کی جائے گی۔

31 جنوری 2021 تک صوبے کی 100 فیصد آبادی صحت کی مفت سہولیات سے استفادہ کرے گی۔

اس منصوبے کے لیے صوبائی حکومت نے 18 ارب روپے مختص کیے ہیں۔تیمور جھگڑا کا کہنا تہا کہ صحت کارڈ پلس سے صوبے کے 60 لاکہ 59 ہزار خاندان اور ساڑہے 4 کروڑ آبادی مستفید ہوں گے۔

قبل ازیں معاون خصوصی برائے اطلاعات و اعلیٰ تعلیم نے صوبے میں کورونا کی صورت حال کے حوالے سے بتایا کہ اس وقت خیبرپختونخوا میں کورونا کے 909 فعال کیسز ہی جبکہ گزشتہ روز 133 نئے کیسز رپورٹ ہوئے اور 3 افراد جاں بحق ہوئے۔