نقیب اللہ کی موت سینے میں گولی لگنے سے ہوئی، ایم ایل او کا بیان

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

نقیب اللہ کی موت سینے میں گولی لگنے سے ہوئی، جسم پر تشدد کے نشان نہیں تھا، ایم ایل او نے بیان قلمبند کرا دیا، کراچی کی انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت نے مفرور ملزمان کی جانب سے رپورٹ پیش نہ کرنے پر ڈی آئی جی ایسٹ کو ذاتی طور پر پیش ہونے کا حکم دیدیا۔

تفصیلات کے مطابق سینٹرل جیل کراچی میں انسداد دہشتگردی کمپلیکس میں خصوصی عدالت کے روبرو نقیب اللہ اور ساتھیوں کے قتل کیس کی سماعت ہوئی، سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار، ڈی ایس پی قمر سمیت و دیگر پیش ہوئے، استغاثہ کی جانب سے ایم ایل او جناح اسپتال نے اپنا بیان ریکارڈ کرا دیا، ایم ایل او کی جانب سے میڈیکل رپورٹ بھی عدالت میں جمع کرا دی۔

ایم ایل او نے بیان دیتے ہوئے کہا کہ جسم پر تشدد کا کوئی نشان نہیں، نقیب اللہ کی موت سینے میں گولی لگنے سے ہوئی ہے، ملزم اکبر ملاح  کے وکیل آئندہ سماعت پر ایم ایل او کے بیان پر جرح کریں گے، عدالت نے دیگر گواہوں کو بھی آئندہ سماعت پر طلب کرلیا، مفرور ملزمان سے متعلق رپورٹ پیش نہ کرنے پر عدالت برہم ہوگئی۔

عدالت نے اظہار برہمی کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ ڈی ایس پی نہ خود عدالت میں پیش ہوتے ہیں، نہ ہی مفرور ملزمان سے متعلق رپورٹ پیش کرتے ہیں، عدالت نے ڈی آئی جی ایسٹ کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 7 اکتوبر کو ذاتی حیثیت میں پیش ہونے کا حکم دیدیا۔