اے این پی کا بلدیاتی انتخابات کے لیے سپریم کورٹ جانے کا اعلان

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے کہا ہے کہ اے این پی اپوزیشن اتحاد کا حصہ ہے لیکن اپوزیشن میں موجود جماعتوں کی نیتوں پر عوامی حقوق کی جنگ کا فیصلہ ہوگا۔

چارسدہ میں ایک شمولیتی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ایمل ولی خان نے کہا کہ گذشتہ دو سال کے دوران بڑی سیاسی جماعتوں کا کردار قابل اعتماد نہیں رہا ہے۔ اگر اپوزیشن سنجیدہ ہیں تو نوازشریف سمیت تمام اپوزیشن قائدین کو پاکستان آکر عوامی جنگ لڑنی ہوگی۔

ایمل ولی خان نے کہا کہ سلیکٹڈ حکمرانوں کے خلاف جنگ میں سب سے پہلے پارلیمنٹ سے استعفے دیے جائیں۔اگر اپوزیشن کی جانب سے یہ سنجیدگی دکھائی گئی تو سلیکٹرز بھی عمران خان کو نہیں بچاسکتے۔ اگرپھر پلان کی بات ہوتی ہے، جلسہ جلوس سے آگے نہیں جاتے تو اتحاد کا کوئی فائدہ نہیں۔

انہوں نے اعلان کیا کہ اے این پی خیبرپختونخوا میں بلدیاتی انتخابات کیلئے سپریم کورٹ جائیگی۔تبدیلی سرکار نے نئی قانون سازی کی ، اے این پی سمیت پوری اپوزیشن نے اسکی مخالفت کی۔آج ہم چیلنج کرتے ہیں کہ اسی قانون کے تحت بلدیاتی انتخابات جلد سے جلد کرائے جائیں۔پی ٹی آئی اس قانون کے آڑ میں راہ فرار اختیار کررہی ہے۔

ایمل ولی خان نے کہا کہ ملک کے اندر پاکستان کی بقا کی کوئی جنگ نہیں، عوام اور طاقتور حلقوں کے درمیان وسائل کی جنگ ہے۔پاکستان میں انگریز سامراج کے غلام حکمرانی کرتے چلے آرہے ہیں۔آج بھی انکی اولادیں حکمران بنے بیٹھے ہیں بلکہ ہر دور میں یہی لوگ حکمران بنائے جاتے ہیں۔پاکستان میں انہی 15 فیصد اور عوام کے درمیان جنگ روز اول سے جاری ہے۔

اے این پی کے صوبائی صدر کا کہنا تھا کہ طاقتور حلقوں، حکومت، سلیکٹرز پر واضح کرنا چاہتے ہیں اٹھارہویں آئینی ترمیم انہی وسائل پر عوامی حق کی جیت ہے۔اے این پی اس ترمیم کے ذریعے صوبائی حقوق اور وسائل پر اختیار کے خلاف کوئی سازش کامیاب نہیں ہونے دے گی۔