پٹرول بحران : خیبر پختونخوا میں پمپوں پر گاڑیوں کی لمبی قطاریں

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

وفاقی کابینہ کی جانب سے پٹروولیم بحران پر سخت نوٹس اور وفاقی وزیر پٹرولیم عمر ایوب خان کی جانب سے پشاور ہائی کورٹ میں تین دنوں میں پٹرول کا معاملہ حل ہونے کی یقین دہانی بھی کام نہ آسکی، پشاور سمیت خیبرپختونخوا میں پٹرول کا بحران بدستور موجود ہے۔ پٹرول پمپس پر گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگی ہوئی ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق پشاور سمیت خیبر پختونخوا کے اکثر اضلاع کے پٹرول پمپوں پر پٹرول بدستور نایاب ہے، شہر کے اکثر پٹرول پمپس پر بند پڑے ہیں جو پمپس کھلے ہیں ان پر گاڑیاں کی لمبی قطاریں لگی ہوئی ہیں جس کے باعث شہریوں کی مشکلات کم نہ ہو سکیں۔

وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے ملک بھر میں پٹرول کے مصنوعی بحران پر سخت نوٹس لینے کے باوجود پٹرول پمپوں پر رش اور پٹرولیم مصنوعات کی نایابی میں کوئی فرق تو نہیں آ سکا البتہ ضلعی انتظامیہ کے افسران اس معاملے پر ضرور ایکٹیو ہو گئے اور دفاتر سے نکل کر پٹرول پمپوں کی چیکنگ شروع کر دی۔

واضح رہے کہ 11 روز گزر جانے کے باوجود پشاور کے ذیادہ تر پٹرول پمپو ں پر بدستور پٹرول نایاب ہے، وزیر اعظم کے ایکشن کے باوجود شہریوں کو پٹرول مافیا سے اچھی امید نہیں۔

یاد رہے کہ 11 جون کو وفاقی وزیر پٹرولیم عمر ایوب نے دعویٰ کیا کہ آئندہ تین روز میں ملک میں پٹرول کی صورتحال بہتر ہو جائے گی۔

پشاور ہائیکورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عمر ایوب نے کہا تھا کہ جو ذخیرہ اندوزی کر رہا ہے اس کے خلاف کارروائی کر رہے ہیں، یہ مافیا عوام تک ثمرات پہنچنے نہیں دے رہا اور اس مافیا کے خلاف پہلی دفعہ کارروائی ہو رہی ہے۔