رمضان : اشیائے ضروریہ کی دوکانوں کیلئے اوقات کار مقرر

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

خیبر پختونخوا میں رمضان کے مہینے میں پہلے ہی لاک ڈاؤن سے مستثنیٰ اشیائے ضروریہ کی دوکانوں اور کاروبار کیلئے اوقات کار مقرر کردیا گیا ہے جس کے مطابق اشیائے ضروریہ کی دُکانیں بشمول کریانہ سٹور، تندور، سبزی اور دودھ کی دُکانوں کے علاوہ صرف ہوم ڈیلیوری اور ٹیک آوے سروس کیلئے ریستوران بھی صبح سے لیکر شام 4 بجے تک کھلی رہیں گی جس کے بعد سب کچھ مکمل طور پر بند کردیا جائے گا۔

یہ فیصلہ وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان کی زیر صدارت جمعہ کے روز صوبائی ٹاسک فورس برائے انسداد کورونا کے ایک اجلاس میں کیا گیا جس کا اطلاق میڈیکل سٹور پر نہیں ہو گا، یہ فیصلہ آج سے نافذ العمل ہو گا۔

اجلاس میں صوبائی وزراء سلیم تیمور جھگڑا، شوکت یوسفزئی اور وزیراعلیٰ کے مشیر اجمل وزیر کے علاوہ کور کمانڈر پشاور لیفٹنینٹ جنرل نعمان محمود، چیف سیکرٹری خیبرپختونخوا اور آئی جی پی خیبرپختونخوا کے اور دیگر متعلقہ سول اور عسکری حکام نے شرکت کی۔

اجلاس میں کئے گئے فیصلوں کے بارے میں پریس بریفینگ کرتے ہوئے صوبائی وزیر سلیم تیمور جھگڑا اور وزیراعلیٰ کے مشیر اجمل وزیر نے بتایا کہ اجلاس میں عوامی مقامات پر فیس ماسک کے استعمال کو لازمی قرار دینے پر غور و خوض کے بعد فیصلہ کیا گیا کہ اس حوالے سے لوگوں کو اگلے ایک ہفتے تک لوگوں کو عوامی مقامات پر فیس ماسک پہننے کی تلقین کی جائے گی جس کے بعد فیس ماسک کے استعمال کو لازمی قرار دیا جائے گا۔

صوبائی وزیر صحت تیمور سلیم جھگڑا نے بتایا کہ ماسک پہننے کو لازمی قرار دینے کا فیصلہ اسلئے کیا گیا ہے کہ جن ممالک میں ماسک پہننا لازمی قراردیا گیا ہے وہاں وائرس کے پھیلاؤ کی رفتار کم ہے۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ اشیائے ضروریہ کی دوکانوں میں احتیاطی تدابیر اور سماجی فاصلوں پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کیلئے چیکنگ سخت کی جائے گی اور جن دوکانوں میں ان باتوں پر عمل درآمد نہیں ہورہا اُنہیں جرمانوں کی بجائے فوری طور پر سیل کر دیا جائے گا۔

اسی طرح رمضان کے دوران مساجد میں عبادات کی ادائیگی کیلئے قومی سطح پر علماء کی مشاورت سے طے شدہ ایس او پیز پر عمل درآمد کے حوالے سے فیصلہ کیا گیا کہ اس مقصد کیلئے مقامی علماء کے ساتھ مشترکہ لائحہ عمل کیلئے صوبائی، ڈویژنل اور ضلعی سطح پر کمیٹیاں بنائی جائیں گی اور جن مساجد میں احتیاطی تدابیر پر عمل درآمد نہ ہو رہا ہو اُن مساجد میں نماز تراویح پڑھنے کی اجازت کو واپس لیا جائے گا۔

اجلاس میں مزید فیصلہ کیا گیا کہ افطاری کے بعد بلا ضرورت بازاروں میں گھومنے پھرنے پر بھی ممانعت ہو گی۔

اجلاس کے شرکاء نے بعض شہروں میں کورونا کی بڑھتی ہوئی تعداد پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ پشاور سمیت تمام حساس شہروں کے تمام انٹری پوائنٹس پر چیکنگ کو سخت کیا جائے اور بلا ضرورت لوگوں کی شہروں میں داخلے کی حوصلہ شکنی کی جائے۔

شرکاء نے کورونا کیسز کی تعداد میں مزید تیزی سے اضافہ ہونے کی صورت میں لاک ڈاؤن کو سخت کرنے پر اتفاق کیا۔

اجلاس کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہاکہ اس وقت حکومت دو محاذوں پر لڑ رہی ہے ایک طرف لوگوں کو کورونا کی وباء سے بچانا ہے تو دوسری طرف اُنہیں بھوک اور افلاس سے بھی بچانا ہے، اس لئے ہم نہ ہی مکمل لاک ڈاؤن کے متحمل ہو سکتے ہیں اور نہ ہی سب کچھ کھولنے کے، اس لئے ایک متوازن لائحہ عمل کے تحت اقدامات کر رہے ہیں۔

بعدازاں وزیراعلیٰ محمود خان نے بذریعہ ویڈیو لنک وزیر اعظم پاکستان عمران خان کی زیر صدارت نیشنل کوآرڈنیشن کمیٹی کے اجلاس میں شرکت کی اور فورم کو صوبائی ٹاسک فورس کے اجلاس میں کئے گئے فیصلوں سے آگاہ کیا۔