طور خم بارڈر پر کورونا وائرس کے شبے میں 6 افغان شہری ملک بدر

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

طورخم بارڈر پر تعینات صحت اور امیگریشن حکام نے اسکیننگ کے دوران کورونا وائرس جیسی علامات سامنے آنے پر 6 افغان شہریوں کو ملک بدر کردیا۔ حکام کا کہنا تھا کہ افغان شہریوں نے حالیہ عرصے میں نہ صرف چین کا سفر کیا تھا بلکہ انہیں کچھ روز سے صحت کے مسائل بھی لاحق تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ ابتدائی انکوائری اور اسکیننگ کے بعد تمام افغان شہریوں کو فوری طور پر واپس ان کے وطن بھیج دیا گیا۔

اس سے قبل بدھ کے روز بھی حکام نے ایک افغان شہری محمد کامران کو بخار میں مبتلا ہونے اور سانس لینے میں مسائل کا سامنا کرنے پر واپس افغانستان بھیج دیا تھا۔ امیگریشن حکام کا کہنا تھا کہ محمد کامران نے جنوری کے وسط میں چین کا دورہ کیا تھا، اس کے بعد وہ اپنے اہلِ خانہ کے ساتھ پشاور میں ایک ماہ تک مقیم رہے تھے۔

دریں اثنا پشاور میں قبائلی اضلاع کے ہیلتھ ڈائریکٹریٹ کے حکام نے کہا کہ طورخم بارڈر پر تعینات امیگریشن عملہ انہیں بروقت معلومات فراہم نہیں کررہا۔ ان کا کہنا تھا کہ انہیں مشتبہ مریضوں کو سروسز ہسپتال پشاور بھجوانے اور افغان شہریوں کو ملک بدر کرنے کے حوالے سے بھی آگاہ نہیں کیا گیا۔

خیال رہے کہ خیبرپختونخوا کے علاقے لنڈی کوتل میں صحت حکام نے ابراہیم خان نامی مقامی تاجر کو علاج کے لیے پشاور کے سروسز ہسپتال منتقل کیا تھا۔ مذکورہ شخص حال ہی میں ایران سے واپس آیا تھا اور شبہ تھا کہ وہ کورونا وائرس میں مبتلا ہے۔