دیرپا امن کے زیادہ مثبت اثرات ضم اضلاع پر پڑیں گے

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

صوبائی وزیر اطلاعات شوکت یوسف زئی نے کہا ہے کہ ملک میں امن پڑوسی ملک افغانستان میں امن سے مشروط ہے، اگر افغانستان میں امن ہوگا تو پاکستان میں بھی امن ہوگا جس کے سب سے زیادہ مثبت اثرات قبائلی اضلاع پر پڑیں گے۔

قبائلی ضلع کرم کے صدر مقام پارہ چنار پہنچنے پر قبائلی جرگہ اور بعدازاں مقامی میڈیا سے خطاب کے موقع پر انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کو خالی خزانہ کیساتھ قرض میں ڈوبا ہوا ملک ملا اور یہی وجہ ہے کہ گزشتہ 18 ماہ سے عوام کو مہنگائی اور مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے مگر اب وقت آگیا ہے کہ ملک سے مہنگائی، بے روزگاری اور کرپشن کا خاتمہ کریں کیونکہ کرپشن کی وجہ سے قومی ادارے تباہ کرنے اور قومی دولت لوٹنے والوں کا احتساب شروع کردیا گیا ہے۔

شوکت یوسفزئی کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی حکومت ملک میں تبدیلی لانے کے اپنے دعوے پر کاربند ہے، فاٹا انضمام کے نتیجے میں قبائلی اضلاع میں پولیس اور عدالتی نظام لانا بھی تبدیلی کا حصہ ہے۔