پی کے 113 جنوبی وزیرستان, پولنگ ڈیوٹی سے انکار پر 110 خواتین اساتذہ معطل

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

پی کے 113 جنوبی وزیرستان میں پولنگ ڈیوٹی سے انکار پر 110 خواتین اساتذہ کو معطل کر دیا گیا۔

ٹی این این کے ساتھ گفتگو میں پی کے 113 جنوبی وزیرستان میں بطور ریٹرننگ آفیسر فرائض سرانجام دینے والے آصف خٹک کا کہنا تھا کہ انتخابات کی تمام تر تیاریاں مکمل کر لی گئی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پولنگ سٹاف کی تربیت مکمل ہوگئی ہے، سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب کاکام تقریباَ 50 فیصد پولنگ سٹیشنوں میں مکمل کیا جا چکا ہے، پولنگ میٹیریل ہمارے پاس آگیا ہے، 18 جولائی تک تمام تیاریاں مکمل کی جائیں اور 19 جولائی کو ٹانک جرگہ ہال سے یہ سب ڈسپیچ کردیا جائے گا۔

آصف خان کے مطابق انہیں سب سے بڑا مسئلہ پولنگ سٹاف خصوصاَ خواتین عملے کا ہے، یہ کمی پوری کرنے کیلئے انہوں نے محکمہ تعلیم اور محکمہ صحت کو درخواست کی ہے اور وہ بھرپور تعاون کررہے ہیں تاہم محکمہ تعلیم کے فی میل سٹاف میں ایسی کئی خواتین ٹیچرز ہیں جو بار بار نوٹس کے باوجود حاضر نہیں ہوئیں۔

ان کا کہنا تھا کہ عدم تعاون کی حامل 110 خواتین اساتذہ کو معطل کیا جا چکا ہے جبکہ ان کے خلاف مزید کارروائی کیلئے الیکشن کمیشن اور سیکرٹری ایجوکیشن کو خط لکھا جائے گا۔

آصف خان نے کہا کہ ایسے زنانہ سٹاف کیخلاف سخت سے سخت کارروائی ہونی چاہیے تاکہ اس اہم قومی فریضہ سے روگردانی کی ہمت کوئی اور نہ کرسکے۔

دوسری جانب ٹی این این کی جانب سے رابطے پر الیکشن کمشنر خیبرپختونخوا کے ترجمان سہیل نے اس معاملے سے لاعلمی کا اظہار کیا اور کہا کہ ایسی شکایات تاحال الیکشن کمیشن کے نوٹس میں نہیں ہیں۔

سہیل کے مطابق جنوبی وزیرستان میں 376 خواتین کی تعیناتی کی گئی ہے جن میں سے کسی کے بارے میں بھی تاحال انہیں کوئی شکایت موصول نہیں ہوئی ہے۔