قبائلی ضلع مہمند کے مشران نے الیکشن بائیکاٹ کی دھمکی دیدی

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

قبائلی ضلع مہمند کے قبائلی مشران نے 20 جولائی کے انتخابات کے بائیکاٹ کی دھمکی دیدی۔

غلنئی پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ملک نادر منان، اعجاز ملک، امیر نواز خان و دیگر مشران کا کہنا تھا کہ انضمام کے عمل میں انہیں اعتماد میں لیا گیا نہ ہی ان کے مطالبات پورے کیے گئے۔

ان کا کہنا تھا کہ الیکشن بائیکاٹ کے حوالے سے ضلعی کی تمام تحصیلوں جرگے جاری ہیں۔

ملک نادر منان کے مطابق مہمند کی عوام فاٹا انضمام کے فیصلے پر نہیں راضی، الیکشن کے بائیکاٹ پر متفق ہیں، حکومت کو چاہیے کہ ہمارے مطالبات تسلیم اور ہمارے ساتھ کیے وعدے پورے کرے۔

ان کا کہنا تھا کہ انضمام کے ہم روزِ اول سے مخالف تھے تاہم تب حکومت نے کہا کہ مقامی مشرانو سے مشاورت کے ساتھ تمام مسائل حل کیے جائیں گے تاہم اب ہمیں مکمل طور پر نظرانداز یا جارہا ہے۔

مشران کے مطابق حکومت پر واضح کیا تھا کہ متاثرین کی واپسی اور بحالی تک قبائلی علاقوں کے پرانے نظام میں تبدیلی نہ کی جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم چاہتے ہیں کہ ہماری قبل انضمام صدیوں پرانی ثقافت خصوصاَ جرگہ نظام کا خصوصی خیال رکھا جائے۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ نیا عدالتی نظام غریب عوام کیلئے مہنگا اور ناقابل برداشت ہے، عدالتی نظام میں فیصلے بھی سرعت میں نہیں کیے جاتے لہٰذا جرگہ سسٹم بحال یا جائے۔

مشران نے کہا کہ 25 جولائی کو تحصیل صافی میں گرینڈ جرگہ ہوگا جس میں اپنے جائز مطالبے حکومت کے سامنے پیش کیے جائیں گے۔