ضم اضلاع کی 72 سالہ محرومیاں دور کردی ہیں، خیبر پختونخوا حکومت کا دعویٰ

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

خیبر پختونخوا حکومت کے ترجمان اور وزیراعلیٰ محمود خان کے مشیر برائے ضم اضلاع اجمل خان وزیر نے دعویٰ کیا ہے کہ ہماری حکومت نے ڈیڑھ سال میں ضم اضلاع کی 72 سالہ محرومیاں دور کر لی ہیں۔

بنوں پریس کلب میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس سے پہلے ان قبائلیوں کے نام پیسے آ ئے وہ قبائلیوں پر خرچ نہیں ہوئے بلکہ ہڑپ کئے گئے۔

اجمل وزیر کے مطابق وزیراعظم عمران خان اور وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا قبائلی اضلاع کے بار بار دورے کر رہے ہیں، قبائلیوں سے محبت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاتا ہے کہ باجوڑ سے وزیرستان تک قبائلیوں کو صحت انصاف کارڈ دیا جا رہا ہے جس کے ذریعے اب وہ ملک کے تمام ہسپتالوں میں سات لاکھ 20 ہزار روپے تک مفت علاج کر سکتے ہیں اور اس کا اجراء شفاف اور آسان بنا کر قومی شناختی کارڈ کے ذریعے دے رہے ہیں۔

ترجمان نے کہا کہ اس سے پہلے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے فارمز ہوتے تھے جو ایم این ایز ، ایم پی ایز کو ملتے تھے جو اپنی مرضی کے ساتھ اپنے حامیوں میں تقسیم کرتے تھے اور مستحق محروم رہ جاتے تھے لیکن یہ واحد پروگرام ہے جس کو ہم نے کنورٹ کر دیا اور شناختی کے ذریعے فی خاندان صحت انصاف کارڈ دیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اسی طرح قبائلی اضلاع کیلئے انصاف روز گار سکیم کے تحت بلاسود قرضوں کیلئے ایک ارب روپے کا اجراء کیا ہے، شمالی وزیرستان اور اورکزئی میں قرضوں کی وصولی کم ہونے کے باعث ہم نے تاریخ میں توسیع کر دی، اسی طرح کامیاب جوان پروگرام کے تحت بھی قبائلی اضلاع بشمول سیٹل اضلاع کے لوگوں کو قرضے ملیں گے۔

اجمل وزیر نے کہا کہ 28ہزار لیویز و خاصہ دار ہمارے لئے بہت بڑا چیلنج تھا ان میں سے ہم نے کسی کو بے روز گار نہیں ہونے دیا اور یہ بھی واضح کر دیتا ہوں کہ یہ باقاعدہ خیبر پختونخوا پولیس میں ضم ہو چکے ہیں ان کو پولیس جیسے مراعات ملیں گی۔

انہوں نے کہا کہ اسی طرح قبائلی اضلاع کیلئے انصاف روز گار سکیم کے تحت بلاسود قرضوں کیلئے ایک ارب روپے کا اجراء کیا ہے، شمالی وزیرستان اور اورکزئی میں قرضوں کی وصولی کم ہونے کے باعث ہم نے تاریخ میں توسیع کر دی، اسی طرح کامیاب جوان پروگرام کے تحت بھی قبائلی اضلاع بشمول سیٹل اضلاع کے لوگوں کو قرضے ملیں گے۔

اجمل وزیر نے کہا کہ 28ہزار لیویز و خاصہ دار ہمارے لئے بہت بڑا چیلنج تھا ان میں سے ہم نے کسی کو بے روز گار نہیں ہونے دیا اور یہ بھی واضح کر دیتا ہوں کہ یہ باقاعدہ خیبر پختونخوا پولیس میں ضم ہو چکے ہیں ان کو پولیس جیسے مراعات ملیں گی۔

ملک خصوصاً خیبر پختونخوا میں جاری آٹا بحران کے حوالے سے صوبائی حکومت کے ترجمان نے کہا کہ ملک میں جاری آٹے کا بحران مصنوعی ہے جو منافع خور طبقے نے بنایا ہوا ہے۔

اجمل وزیر کے مطابق وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا نے صوبے کے تمام ڈپٹی کمشنرز کو ہدایات جاری کی ہیں کہ منافع خوروں کے خلاف سخت کریک ڈاون کریں، بحران پیدا کرنے والوں کے خلاف بھر پور کارروائی کر رہے ہیں۔

خیال رہے کہ پشاور سمیت خیبر پختونخوا کے مختلف علاقوں میں تندور بند ہیں، آٹے کی قیمت میں اضافے اور مصنوعی قلت کے باعث نان بائیوں نے غیر معینہ مدت کے لیے ہڑتال کردی ہے جس کے نتیجے میں شہریوں کو مشکلات کا سامنا ہے۔

نان بائیوں نے آٹا مہنگا ہونے کے باعث روٹی کی سرکاری قیمت دس سے بڑھا کر پندرہ روپے کرنے کا مطالبہ کیا ہے لیکن صوبائی حکومت نے روٹی اور نان کی قیمت میں اضافہ نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

دوسری جانب وفاقی حکومت نے ملک میں جاری آٹے کے بحران کے خاتمہ کیلئے گندم درآمد کرنے کے ضمن میں ہنگامی بنیادوں پر اقدامات مکمل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔