نئے اضلاع میں ترقیاتی کام حکومتی اعلانات تک محدود

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

سابقہ فاٹا کو خیبر پختونخوا میں تو ضم کر لیا گیا ہے تاہم ایسے لگتا ہے کہ وفاقی و صوبائی حکومت قبائلی عوام کے ساتھ کیے گئے وعدوں کو ایفاء کرنے میں مخلص یا سنجیدہ نہیں ہے۔

قومی اسمبلی سے اپنے خطاب میں قبائلی ضلع کرم سے منتخب ایم این اے میر اورکزئی نے حکومت پر کڑی تنقید کی اور مطالبہ کیا کہ حسب وعدہ نئے اضلاع کیلئے این ایف سی ایوارڈ میں تین فیصد حصہ مختص کیا جائے اور اس سلسلے میں عملی اقدامات اٹھائے جائیں۔

منیر اورکزئی نے کہا کہ نئے اضلاع میں انضمام کے عمل پر پیشرفت جاری ہے نہ ہی کوئی ترقیاتی کام ہو رہے ہیں اور یہ سب صرف حکومتی بیانات اور اعلانات تک ہی محدود ہے۔

انہوں نے کہا کہ نئے اضلاع میں  پولیس کا نظام موثر ہے نہ ہی کسی کو انصاف مل رہا ہے۔

رکن قومی اسمبلی نے سیاسی جماعتوں پر بھی کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ہر پارٹی اپنے مفادات کے تحفظ میں لگی ہوئی ہے اور قبائلی عوام کو خالی خولی وعدوں پر ٹرخایا جا رہا ہے۔

منیر اورکزئی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ قبائلی لوگوں کے ساتھ کیے گئے وعدے ایفا کیے جائیں، قبائلی عوام حکومت ہی کی جانب دیکھ رہے ہیں۔