لاپتہ افراد کے لواحقین کا احتجاج تسلیم کرتے ہیں، دہشتگردی تسلیم نہیں: نگران وزیر اعظم

نگران وزیر اعظم انوارالحق کاکڑ  نےکہا ہےکہ لاپتہ افرادکے لواحقین  پہلے بھی احتجاج کرتے رہے ہیں آئندہ بھی کریں گے، ہم احتجاج تسلیم کرتے ہیں لواحقین کی دہشت گردی تسلیم نہیں کرتے۔

لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے نگران وزیر اعظم انوارالحق کاکڑ کا کہنا تھا کہ احتجاج کا سب کو  حق ہے مگر  آئین کے اندر  رہ کر کرنا چاہیے، مجھے خوشی ہوئی پنجاب کے لوگوں کو بلوچستان کے لوگوں سے ہمدردی ہے، 9 مئی کو احتجاج کرنے والوں کا بھی یہی ایشو تھا وہ قانون کے دائرے سے باہر  آگئے تھے۔

نگران وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ احتجاج والوں کے ساتھ پولیس کی جھڑپ کو غزہ سے جوڑا جا رہا ہے، جو  یہاں کی صورتحال غزہ سے جوڑ  رہے تھے ان کو اپنے گریبان میں جھانکنا چاہیے، کسی نے پوچھا کہ بلوچستان میں مسلح تنظیمیں لوگوں کو قتل کیوں کرتی ہیں؟ کوسٹل ہائی وے پر 14 افراد جل کر مرگئےکسی نے نہیں پوچھا کہ قاتل کیوں نہیں پکڑے، بلوچستان میں ٹیچرز ، وکلا ، مزدور قتل ہو رہے ہیں کسی کے منہ سے لفظ تک نہیں نکلتا۔

انوارالحق کاکڑ کا کہنا تھا کہ احتجاج کی آڑ میں دہشت گردوں کو سپورٹ کرنے والوں کو قبول نہیں کریں گے، جن لوگوں نے حمایت کرنی ہے وہ ان مسلح تنظیموں کا کیمپ جوائن کریں، اپنے پیاروں کے لیے احتجاج کرنے والوں کو حق ہے، باقی صرف تنقید کر رہے ہیں، یہ ریاست اور مسلح تنظیموں کے درمیان جھگڑا ہے، یہ مسلح لوگ 3 سے 5 ہزار لوگوں کو مار چکے ہیں، یہ لوگ دہشت گردی کو جدوجہد کہتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان میں مسلح تنظیمیں پاکستان کو توڑنےکی مسلح جدوجہد پر یقین رکھتی ہیں، اگر آپ وہاں گئے تویہ آپ کو گولی ماریں گے، میں ان کے ہتھے چڑھا تو مجھے گولی ماریں گے، یہ مسلح تنظیمیں اپنے موقف کا عملی اظہار کرتے آرہی ہیں، دہشت گردوں کے بھی لواحقین ہوتے ہیں، بہت سارے لوگ ان کے لیے احتجاج کرتے ہیں، ہم ان کے احتجاج کو تسلیم کرتے ہیں لیکن دہشت گردی کے حق کو تسلیم نہیں کرتے، دہشت گردوں کے ساتھ اسی شدومد کے ساتھ لڑیں گے۔

انہوں نے کہا کہ نہ یہ 1971 ہے اور نہ یہ بنگلادیش بننے جارہا ہے، مجھے طعنے نہ دیں کہ بلوچ یاد رکھیں گے، میرا بلوچوں سے تین نسلوں کا تعلق ہے، حمایتی جواب دیں ڈاکٹر شفیع مینگل کو کس نے قتل کیا،کیا وہ بلوچ نہیں تھے؟ 90 ہزار افراد قتل ہوگئے، 9 ملزمان کو سزا نہیں ہوئی،کریمنل جسٹس سسٹم کس نے ٹھیک کرنا تھا؟ کیا کورکمانڈر کانفرنس یا واپڈا نے ٹھیک کرنا تھا؟ یہ میرا کام نہیں تھا کہ قوانین کو درست کرتا، ہمیں بھی ان عدالتوں پر اعتماد ہے، ان کو بھی ہے جائیں عدالتوں میں۔

الیکشن کے حوالے سے نگران وزیراعظم کا کہنا تھا کہ الیکشن ہوں گے اور اس کو پر امن بنایا جائےگا، میں 8 فروری کو ووٹ ڈالنے جاؤں گا۔