یوایس ایڈ کے زیر اہتمام 70 ایگریکلچر افسران اور زمینداروں کے لئے ڈرون سپرئیر تربیتی پروگرام کا انعقاد

یو ایس ایڈ کے اقتصادی بحالی اور ترقی پروگرام نے 77 فیلڈ سٹاف او زمینداروں کے لیےدوروزہ تربیتی ورکشاپ کا انعقاد کیا، اس ٹرینگ میں زرعی ٹیکنالوجی پر توجہ مرکوز کی گئی۔

تربیتی سیشنز پشاور، کوہاٹ، ڈیرہ اسماعیل خان، سوات اور ایبٹ آباد میں منعقد کیے گئے، جن میں محکمہ زراعت کے عملے اور کسانوں کو ڈرون اسمبلی، سپریر کے استعمال اور ڈرون آپریشن کے ہنر سے لیس کیا گیا۔

ڈرون جیسی جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کے ذریعے زرعی پیداواری صلاحیوتوں میں اضافہ کیا جا سکتا ہے۔ ایسی عملی تربیت فراہم کر کے یوایس ایڈ خیبر پختونخوا اور ضم شدہ اضلاع میں زارعت کے شعبے کو جدید اور بااختیار بناتاہے۔

جان محمد، ڈائریکٹر جنرل ایگریکلچر ایکسٹینشن خیبر پختونخوا نے اس اقدام کو سراہتے ہوئے کہا: (یہ تربیت ہمارے فیلڈ سٹاف کو زراعت کی جدید تکنیک کے موثر استعمال کے لیے تیار کررہی ہے، جس سے زرعی پیداوار میں مزید اضافہ ہوگا۔)

یو ایس ایڈ کے اقتصادی بحالی اور ترقی پروگرام کے چیف آف پارٹی شاد محمد نے اپنے تاثرات کا اظہار کرتے ہوئے کہا،: (جدید تربیت کے ذریعے ہی ہم خیبر پختونخوا اور ضم شدہ اضلاع کی ایگریکلچر میں ترقی کے بیج بوتے رہیں گے، پائیدار ترقی کے لیے ٹیکنالوجی کے استعمال ہماری لگن اور محنت کی عکاسی کرتا ہے۔)

ایگریکلچر آفیسر شوانہ جلیل خان نے تربیتی ورکشاپ پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ: ”ڈرون اسمبلی، آپریشن اور ایپلیکیشنز کے بارے جاننے سے ہمارے علم میں مزید اضافہ ہوا۔ اب ہم ان جدید طریقوں کو اپناکر مقامی کسانوں کی مدد کرنے کے لیے تیار ہیں۔”۔

بنوں سے تعلق رکھنے والے کسان سراج خان نے ٹیکنالوجی کی صلاحیت پر زور دیا: ”ڈرون جیسی ایجادات وسائل کے استعمال کو بہتر بناتے ہیں، پیداوار میں اضافہ کرتے ہیں، اور معاش کو بہتر بناتے ہیں۔ میں جو کچھ سیکھ چکاہوں، اس پر عمل درآمد کرنے کے لیے بے چین ہوں۔)

یو ایس ایڈ کے اقتصادی بحالی اور ترقی پروگرام کی سرگرمی مقامی زمینداروں کو بااختیار بنانے اور خیبر پختونخوا اور ضم شدہ اضلاع میں معاشی ترقی میں ایک اہم پیشرفت ہو گی۔ یہ تربیتی پروگرام زراعت کے شعبے میں ترقی اور جدت کو فروغ دینے کے عزم کو ظاہر کرتا ہے۔