خواتین کو بااختیار بنانے کے موضوع پر جی سی یو لاہور میں سمپوزیم کا انعقاد

گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور میں یونیورسٹی آف سنڈرلینڈ، برطانیہ کے اشتراک سے ”پالیسی سازی اور عملدرآمد کے ذریعے خواتین کیلئے روزگار کے راستے کو مضبوط بنانے“ کے عنوان سے سمپوزیم کا انعقاد کیا گیا، جس کی صدارت جسٹس (ریٹائرڈ) ناصرہ جاوید اقبال نے کی۔

سمپوزیم میں شرکاء نے خواتین کی فلاح و بہبود کے لیے موزوں تنظیمی پالیسیاں بنانے اور ان پر عملدرآمد کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔

جی سی یو کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اصغر زیدی نے کام کی جگہوں پر خواتین کی صحت کی ضروریات کو پورا کرنے پر زور دیا۔ انہوں نے خواتین کیلئے جی سی یو لاہور کی طرف سے بنائے گئے ڈے کیئر سینٹر اور وومن ڈیویلپمنٹ سینٹر کے قیام پر بھی تفصیلی طور پر آگاہ کیا۔

سنڈر لینڈ یونیورسٹی کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر شجرہ الدرار نے پاکستان میں مثبت تبدیلیاں لانے کیلئے غیر متزلزل عزم کا اظہار کیا۔ انہوں نے ڈاکٹر اصغر زیدی جیسے لوگوں کی مشترکہ کاوشوں کا اعتراف کیا جو ان کے وژن کا اشتراک کرتے ہیں۔

پاکستان سوسائٹی آف انٹرنل میڈیسن کی سیکرٹری جنرل ڈاکٹر صومیہ اقتدار، ڈاکٹر ملک حماد احمد،نیپرا کے ڈپٹی ڈائریکٹر مانیٹرنگ اینڈ انفورسمنٹ عاقب علی شاہ، جنید الیاس، گائناکالوجسٹ ڈاکٹر جمشید فیروز، لیگل ایڈ اینڈ جسٹس اتھارٹی پاکستان کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر رحیم اعوان، ڈرہم یونیورسٹی سے پروفیسر ڈاکٹر ہیلن گووریک، لیڈز یونیورسٹی لاہور کے وائس چانسلر ڈاکٹر ندیم احمد بھٹی اور جی سی یو وومن ڈویلپمنٹ سینٹر کی انچارج سمیرا خلیل نے بھی خطاب کیا۔

پینل ڈسکشن میں بحریہ یونیورسٹی اسلام آباد کے پروفیسر ڈاکٹر محمد نوید، حورین ممتاز خٹک اور رابعہ شہزاد بھی شامل تھیں۔