جے یو آئی ف کے مفتی کفایت اللہ بیٹوں سمیت حملے میں زخمی

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

جمعیت علمائے اسلام ف کے رہنما مفتی کفایت اللہ، ان کے 2 بیٹوں اور ساتھی صبح سویرے بیدرا روڈ کے قریب ایک حملے میں زخمی ہوگئے۔

مفتی کفایت اللہ کے بڑے بھائی حبیب الرحمٰن نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ’حملہ آور وہ ہیں جن کے خلاف مفتی کفایت اللہ کھلےعام بات کرتے ہیں، انہوں نے بتایا کہ نامعلوم حملہ آوروں کے خلاف مقدمہ درج کروادیا گیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق جے یو آئی (ف) رہنما اسلام آباد سے مانسہرہ جارہے تھے جب بیدرا روڈ کے قریب ان کی گاڑی کو روک کر حملہ کیا گیا۔

حملے کے نتیجے میں مفتی کفایت اللہ ان کے 2 بیٹے شبیر مفتی اور حسین مفتی اور ایک ساتھی جان محمد کو شدید زخم آئے اور انہیں فوری طور پر کنگ عبداللہ ٹیچنگ ہسپتال منتقل کیا گیا۔

زخمیوں کو طبی امداد فراہم کرنے والے ڈاکٹرز کے مطابق جے یو آئی رہنما کی کمر اور جسم کے دیگر حصوں پر زخم آئے۔

حسین مفتی کی جانب سے سٹی پولیس اسٹیشن تھانے میں درج کروائی گئی ایف آئی آر کے مطابق وفاقی دارالحکومت سے واپس آتے ہوئے راستے میں حملہ آوروں نے ان کی گاڑی روکی اور انہیں لوہے کی سلاخوں سے تشدد کا نشانہ بنایا۔

اس بارے میں مفتی کفایت اللہ کے بھائی حبیب الرحمٰن نے اس خدشے کا اظہار کیا کہ حملہ آور جے یو آئی رہنما اور ان کے بیٹوں کو جان سے نہیں مارنا چاہتے تھے لیکن یہ ان کے لیے ایک واضح پیغام ہے کہ حملہ آوروں کے خلاف بات کرنا چھوڑ دیں۔

یاد رہے کہ اسے قبل 14 دسمبر کو بھی پولیس نے جے یو آئی کے اہم اور سینئر رہنما مفتی کفایت اللہ کو اشتعال انگیز تقریر کرنے کے الزام میں گرفتار کیا تھا تاہم بعد میں وہ رہا ہوگئے تھے۔