جنوبی وزیرستان : شکئی میں تعلیمی سیمینار میں 29 سرکاری سکولوں کو مکمل فعال کرنے کا مطالبہ

جنوبی وزیرستان کے علاقے وادی شکئ میں ،شکئی یوتھ ویلفیئر آرگنائزیشن کے زیراہتمام تعلیمی سیمینار کا انعقاد کیا گیا جس میں سیاسی و سماجی رہنماؤں کے علاوہ ہر مکتبہ فکر کے لوگوں نے کثیرتعداد میں شرکت کی.

سیمینار کے مہمان خصوصی ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر فرمان اللہ نے اپنے خطاب میں تعلیم کی اہمیت پر زور دیا

انہوں علاقے میں تعلیمی سرگرمیوں کی بہتری کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم علاقے کے لوگوں کی بنیادی ضرورت ہے کوئی بھی خطہ تعلیم کے بغیر ترقی نہیں کر سکتاآمن وآمان کے لئے پولیس ملکر کام جاری رکھیں گے .

سیمینار میں عوامی نیشنل پارٹی کے ایاز وزیر، پاکستان پیپلز پارٹی عمران مخلص، جماعت اسلامی کے اسد اللہ بھیر، جمعیت علمائے اسلام ف کے شوکت اللہ، سابق امیدوار تاج محمد، سیاسی و سماجی رہنماء امیر حمزہ وزیر، عمران خان نے پاکستان تحریک انصاف عجب گل ایجوکیشن آفیسر محسود ودیگر نےشرکت کی.

مقررین نے وادی شکئی میں محکمہ تعلیم کے کردار پر تشویش کا اظہار ہے کہ 29 میل فیل سرکاری ادارے ہیں، جس میں بیشتر تعلیمی ادارے غیر فعال ہیں.

مقررین نے علاقائی دیگر مسائل پر اظہار خیال بھی کیاگیا جسمیں زراعت جنگلات اور ہیلتھ کے علاوہ موبائل سروس انٹرنیٹ پر بھی بات کی .

سیمینار کے مقررین نے فیصلہ کیا کہ وہ تعلیم کے میدان میں مشترکہ کوششیں کریں گے اور سول انتظامیہ کو واضح کہا کہ وہ علاقے کے لوگوں کی بھلائی کے لئے سرکاری میل اور فی میل تعلیمی اداروں کو فعال کریں

ایجوکیشن آفیسر محسود خان کا کہنا ہے کہ علاقے میں تعلیمی اداروں سے علاقہ مکین مستفید ہو رہے ہیں، متعدد سکولوں پر کام جاری ہے آنشاء گورنمنٹ ہائی سکول شکئ ایک مثالی ادارہ بنائینگے

جہاں پر تعلیمی سرکاری سکولز غیرفعال ہے نشاندہی کرکے ایکشن لیاجائیگا .

اس موقع پر شکئ یوتھ ویلفئیرآرگنائزیشن نے شکئ میں فی کی سرکاری سکولوں کو جلد ازجلد بحال کرنے کا مطالبہ کیااور کہاکہ علاقے میں فی میل ایجوکیشن سرگرمیاں نہ ہونے کی برابر ہے .

اس دوران سیمینار میں سویڈن میں قرآن پاک کی بے حرمتی کی شدید مذمت کی.