9 مئی واقعے پر عوام کی رائے, فوج نہیں یہ سیاسی جماعتوں نے کیا ہے

9 مئی واقعے پر ڈی جی آئی ایس پی آر کی حالیہ پریس کانفرنس کے اہم بیانات پرپاکستانی عوام نے اپنی رائے دی ہے۔

عوام نے 9 مئی واقعات میں ملوث کرداروں کو کیفر کردار تک پہنچانے کی بھر پور حمایت کی ہے، عوامی رائے کے مطابق فوج حفاظت کرتی ہے، اس کیخلاف نہ بات ہوسکتی ہے نہ کرنی چاہیے، شرپسندوں نے ملک کا نقصان کیا ہے، فوج ایسا نہیں کرسکتی۔

عوام رائے کے مطابق اپنے ملک کی ہم نے اینٹ سے اینٹ بجادی، دشمنوں کو کہنے کی کیا ضرورت ہے، چیئرمین پی ٹی آئی کو پہلے خود اپنے گریبان میں جھانکنا چاہیے، ہماری  پوری دنیا میں بدنامی ہوئی ہے، ایسے کرداروں کو عبرتناک سزا دینی چاہیے۔

عوام کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کو ایسا نہیں کرنا چاہیے تھا، قانون اپنے ہاتھ میں نہیں لینا چاہیے تھا، جن  سویلینز نے وہاں مداخلت کی ہے ان کا بھی محاسبہ ہونا چاہیے، یہ سزا کے لائق ہیں، عوام کو پریشان کیا ہوا ہے، ہمارے افسروں نے بہت اچھی بات کہی ہے۔

عوام رائے کے مطابق مجھے نہیں لگتا عوام فوج کے خلاف جائے گی اور نہ جاتی ہے، چیئرمین پی ٹی آئی کو ایسے نہیں کرنا چاہیے تھا جیسے ان لوگوں نے کیا ہے، اتنی ہاسٹیلیٹی نہیں دکھانی چاہیے تھی، یہ کچھ لوگوں کی سازش کی وجہ سے ہوا ہے۔

9 مئی واقعے پر ایک شرکا کا کہنا تھا کہ میں سرکار سے اپیل کرتا ہوں کہ ان لوگوں کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کی جائے، فوج نہیں یہ سیاسی جماعتوں نے کیا ہے، میں سخت مذمت کرتا ہوں، پاک آرمی کے ساتھ ہر وقت کھڑے ہیں،  جو اس کی سپورٹ کرتے بھی ہیں میرے خیال میں وہ بھی غلط ہیں۔

عوامی رائے کے مطابق جس کی بھی سازش تھی اس کے خلاف کارروائی کی جائے، جو بھی ڈی جی آئی ایس ایس پی آر نے کہا ہے سب صحیح کہا ہے، پاکستان آرمی کا کوئی قصور نہیں ہے، یہ سیاسی پارٹی صحیح نہیں ہے، عوام کے ساتھ جو غداری کی ہے، ان کو سزا ملنی چاہیے، جو بھی ملوث تھے ان کو سامنے لایا جائے۔