پشاور، سینئر وکیل لطیف آفریدی قاتلانہ حملے میں جاں بحق، قاتل گرفتار

سینئر وکیل اور سپریم کورٹ بار کے سابق صدر لطیف آفریدی فائرنگ کے واقعے میں جاں بحق ہو گئے۔

ذرائع کے مطابق فائرنگ کا واقعہ پشاور ہائی کورٹ کے احاطے میں بار روم میں پیش آیا، لطیف آفریدی کو زخمی حالت میں لیڈی ریڈنگ اسپتال منتقل کیا گیا، جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے جاں بحق ہو گئے جبکہ ایس ایس پی آپریشنز کے مطابق لطیف آفریدی پر فائرنگ کرنے والے شخص کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔

لیڈی ریڈنگ اسپتال پشاور کے ترجمان نے لطیف آفریدی کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ انہیں متعدد گولیاں لگی تھیں۔ اسپتال میں ابتدائی کارروائی کے بعد جسد خاکی کوا یمبولینس کے ذریعے آبائی گاؤں روانہ کردیا گیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق سینئر وکیل لطیف آفریدی کے قتل میں گرفتار ملزم کی شناخت بھی ہوگئی، جس کا نام عدنان آفریدی ولد سمیع اللہ ہے۔ ملزم کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ وہ ہائی کورٹ میں جونیئر وکیل ہے۔

دریں اثنا سینئر وکیل لطیف آفریدی کے قتل کیس میں اہم انکشاف ہوا  ہے، جس کے مطابق گرفتار ملزم عدنان سمیع آفریدی انسداد دہشت گردی عدالت سوات کے مقتول جج آفتاب آفریدی بھانجا ہے۔

تفتیشی ٹیم کے مطابق مقتول لطیف آفریدی، انسداد دہشت گردی عدالت سوات کے مقتول جج آفتاب آفریدی کے قتل کیس کی ایف آئی آر میں نامزد تھے۔

دوسری جانب خیبر پختونخوا بار کونسل نے سینئر قانون دان لطیف آفریدی پر فائرنگ کے واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کل صوبے بھر میں ہڑتال اور تین روزہ سوگ  کا اعلان کیا ہے۔ بار کونسل کی جانب سے قتل کے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ معاملے کی فوری تحقیقات کرکے ذمے داروں کو قرار واقعی سزا دی جائے۔

دسرے جانب امیر جماعت اسلامی خیبر پختونخوا پروفیسر محمد ابراہیم خان نے سینئر وکیل رہنماء عبداللطیف آفریدی کے قتل کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ بار روم میں وکیل رہنماء کا قتل افسوسناک ہے۔ واقعہ صوبائی حکومت اور پولیس سیکورٹی کی ناکامی ہے۔

سوگوار خاندان کے غم میں برابر کے شریک ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت وکلاء سمیت کسی شہری کو بھی تحفظ فراہم نہیں کرسکتی۔ بار روم کے اندر ایک سینئر وکیل کے قتل نے کئی سوالات کو جنم دیا ہے۔ لطیف لالا کے قاتل کو سخت سزا دی جائے۔

انہوں نے مرحوم کی مغفرت اور پسماندگان کے لیے صبر جمیل کی دعا کی۔ جماعت اسلامی خیبر پختونخوا کے سیکرٹری جنرل عبدالواسع، نائب امیر و ممبر صوبائی اسمبلی عنایت اللہ خان نے بھی لطیف لالا کے قتل کی شدید مذمت، مرحوم کی مغفرت اور پسماندگان کے لیے صبر جمیل کی دعا کی۔