پولیس نے دارالحکومت کو بڑی تباہی سے بچا لیا

اسلام آباد میں آئی ٹین فور کے علاقے میں خودکش دھماکا ہوا ہے. پولیس کے مطابق دھماکے سے ہیڈ کانسٹیبل عدیل حسین شہید ہوا جب کہ زخمیوں میں اہل کار محمد حنیف، محمد یوسف اور محمد بلال شامل ہیں۔ پولیس نے بتایا ہے کہ دھماکے کے نتیجے میں مشتبہ گاڑی کا ڈرائیور بھی ہلاک ہوا ہے۔

ڈی آئی جی اسلام آباد سہیل ظفر چٹھہ کے مطابق گاڑی میں ایک مرد اور ایک عورت سوار تھی۔ اسلام آباد پولیس کے ترجمان کے مطابق شہر میں سکیورٹی ہائی الرٹ تھی اور چیکنگ چل رہی تھی کہ اس دوران پولیس جوانوں نے چیکنگ کے لیے مشکوک گاڑی کو روکا۔

پولیس ترجمان کا بتانا ہے کہ گاڑی رُکتے ہی خودکش بمبار نے خود کو دھماکے سے اڑا دیا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ دھماکے کی آواز دور دور تک سنی گئی جس کے فوری بعد  پولیس بھی جائے دھماکا پر پہنچ گئی۔ پولیس کے مطابق زخمی اہلکاروں کو پمز اسپتال منتقل کر دیا گیا ہے اور بھاری نفری نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے۔

وزارت داخلہ کے ذرائع کے مطابق سیف سٹی کیمروں کی مدد سے دھماکے کی تحقیقات شروع کر دی گئی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ سیف سٹی کیمروں کی مدد سے پتا چلایا جائے گا کہ گاڑی کہاں سے آئی. رپورٹس کے مطابق دھماکے کے بعد ضلع راولپنڈی میں سکیورٹی ہائی الرٹ کرتے ہوئے تمام داخلی و خارجی راستوں کی ناکہ بندی کر دی گئی ہے۔

ڈی آئی جی اسلام آباد سہیل ظفر چٹھہ کا کہنا ہے کہ پولیس اہلکاروں نے وفاقی دارالحکومت کو بڑی تباہی سے بچا لیا۔

ڈی آئی جی اسلام آباد سہیل ظفر چٹھہ آئی ٹین فور میں ہونے والے خودکش دھماکے کے بعد فوری طور پر جائے وقوعہ پہنچے اور صورتحال کا جائزہ لیا۔

اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سہیل ظفر چٹھہ کا کہنا تھا کہ ایگل اسکواڈ کے اہلکاروں نے ایک مشکوک گاڑی کو روکا جس میں ایک مرد اور ایک عورت موجود تھے، تلاشی کے دوران گاڑی میں موجود شخص نے خود کو دھماکا خیز مواد کی مدد سے اڑایا۔

ڈی آئی جی اسلام آباد کا کہنا تھا کہ پولیس اہلکاروں نے وفاقی دارالحکومت کو بڑی تباہی سے بچا لیا، دھماکے میں ایک اہلکارشہید اور 4 زخمی ہوئے جبکہ دونوں خودکش حملہ آور ہلاک ہو گئے۔

وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللّٰہ نے کہا ہے کہ اسلام آباد میں ہائی “ویلیو ٹارگٹ” کو نشانہ بنانے کے لیے آج صبح بارود سے بھری گاڑی راولپنڈی سے اسلام آباد میں داخل ہوئی۔

وزیر داخلہ نے ایک نجی ٹی وی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بارود سے بھری گاڑی آئی جے پرنسپل روڈ راولپنڈی سے اسلام آباد میں داخل ہوئی، جس میں ایک مرد اور خاتون دہشت گرد سوار تھے، دھماکے میں دونوں ہلاک ہوئے۔

رانا ثناء اللّٰہ نے کہا کہ ایگل اسکواڈ نے گشت کے دوران مشکوک سمجھتے ہوئے گاڑی کو روکا تو اسی دوران گاڑی میں دھماکا ہوگیا، جس سے ایک پولیس اہلکار شہید اور 6 زخمی ہوگئے۔

وزیر داخلہ نے بتایا کہ دھماکے میں دونوں دہشت گرد ہلاک ہوگئے۔

وزیر داخلہ کا کہنا ہے کہ پولیس کی فرض شناسی سے اسلام آباد بڑے حادثے سے محفوظ رہا، فرض شناسی پر پولیس کو خراجِ تحسین پیش کرتا ہوں۔ انہوں نے شہید اہلکار عدیل حسین کے اہلخانہ سے ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پولیس اہلکار کو شہدا پیکج دیا جائے گا۔