سیلاب متاثرین : پاک فوج کے افسران کا  ایک ماہ کی تنخواہ دینے کا اعلان

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق پاک فوج نے ملک میں بارشوں اورسیلاب متاثرین کی مدد کرنے کیلئے بڑا اقدام اٹھایا ہے ، جس کے تحت پاک فوج کے تمام افسران اپنی ایک ماہ کی تنخواہ فلڈ ریلیف فنڈ میں دیں گے جو مصیبت کی اس گھڑی میں متاثریں کیساتھ ہمدردی کی بڑی مثال ہے۔

آئی ایس پی آر کے مطابق پاک فوج اپنے اسٹاک سے اب تک تین ہزار 700 سے زائد ٹینٹس اور دیگر بنیادی اشیائے ضروریہ متاثرین سیلاب و بارش میں تقسیم کرچکی ہے۔

چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ کی ہدایت پر پاک فوج نے اپنے تین دن سے زائد کا راشن بھی سیلاب متاثرین میں بانٹا ہے۔واضح رہے کہ پاک فوج کی جانب سے اس وقت ملک بھر کے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں ریسکیو اینڈ ریلیف آپریشن جاری ہے۔

دستیاب اعداد و شمار کے تحت چالیس ہزار سے زائد متاثرین سیلاب کو آرمی کے قائم کردہ 137 ریلیف کیمپوں میں منتقل کیا جا چکا ہے جب کہ 200 کے قریب عارضی طبی مراکز میں 23 ہزار سے زائد افراد کو ادویات اور طبی امداد فراہم کی گئی ہیں۔

اسی طرح آرمی اپنے موجود اسٹاک میں سے3700سے زائد ٹینٹ اور ضرورت کی دیگر اشیاء بھی متاثرین میں تقسیم کر چکی ہے، آرمی چیف کے خصوصی حکم پر آرمی اپنے3دن سے زائد راشن(تقریباََ1500ٹن) کو بھی سیلاب سے متاثرہ علاقے میں عام لوگوں میں بانٹ چکی ہے

آئی ایس پی آر کے مطابق موسمی تبدیلیوں کے براہ راست اثر کے طور پر اس مون سون کے دورا ن پاکستان کو غیر معمولی بارشوں،GLoFاور کلائوڈ برسٹ کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق جس کلائوڈ برسٹ کے نتیجے میں بلوچستان، سندھ، جنوبی پنجاب اور خیبر پختونخواہ کے متعدداضلاع میں سیلابی صورتحال اور بھاری نقصانات ہوئے ہیں۔

ایسے میں اپنی قومی ذمہ داری کے تحت، پاکستان آرمی نے نوٹیفائیڈ متاثرہ علاقوں میں ایک بھرپور ریسکیو اور ریلیف مہم کا آغاز کیا ہوا ہے. اس دکھ اور تکلیف کے مرحلے میں پاکستان آرمی، قوم کے شانہ بشانہ اپنی ذمہ داریاں بھرپور طریقے سے ادا کر نے کے لیے کوشاں ہے۔

اس ضمن میں نہ صرف ریسکیو اور ریلیف پر توجہ دی جا رہی ہے بلکہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کی خصوصی درخواست پر ایک اچھی بحالی مہم کی بنیادی ضرورت کے طور پر آرمی تمام نشاندھی کردہ متاثرہ علاقوں میں مشترکہ سروے کرنے میں سول انتظامیہ کو بھرپور مدد فراہم کر رہی ہے۔

واضح رہے کہ وزیراعظم کی اپیل پر سیلاب متاثرین کے لیے عالمی تنظیموں اور مالی اداروں نےبھی 50 کروڑ ڈالر سے زائد کی فوری امداد کا اعلان کردیا ہے۔

وزیراعظم کی زیرصدارت سیلاب زدگان کی مدد کیلئے اقتصادی امور ڈویژن میں اجلاس ہوا جس میں ورلڈبینک، ایشائی ترقیاتی بینک، عالمی مالیاتی اداروں، عالمی ڈونرز سمیت چین، امریکا اور یورپی ممالک کے نمائندوں نے شرکت کی۔

اقوام متحدہ کے مختلف ذیلی اداروں،عالمی ادارہ صحت کےنمائندےبھی شریک ہوئے۔ ورلڈبینک کے کنٹری ڈائریکٹر نے 350 ملین ڈالر کی فوری امداد سے متعلق آگاہ کیا۔

ورلڈبینک 50 ملین ڈالر امداد رواں ہفتےکےآخر تک مکمل طور پر فراہم کر دےگا۔ ورلڈ فوڈ پروگرام نے سیلاب متاثرین کیلئے 110 ملین ڈالر کی امداد کا اعلان کیا۔

اےڈی بی نے 20 ملین ڈالر اور یوکے ایڈ نے 1.5ملین پاؤنڈ کی کی فوری امداد کرے گا۔ یوکے ایڈ کی جانب سے وسط اور طویل مدتی منصوبوں کیلئے38ملین پاؤنڈ کا بھی اعلان کیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ اس وقت بین الاقوامی اداروں سمیت پاکستان کے سیکیورٹی اداریں، سول انتظامیہ، سیاسی و سماجی مشران اور ہر طبقہ فکر کے لوگ امدادی سرگرمیوں میں بھرپور حصہ لے رہے ہیں