سیلاب سے متاثرہ ڈیرہ اسماعیل خان اور چترال آفت زدہ قرار دینے کا فیصلہ

خیبر پختونخوا حکومت نے سیلاب سے متاثرہ ضلع ڈی آئی خان اور چترال کو آفت زدہ قرار دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیراعلیٰ محمود خان نے متعلقہ حکام کو ضروری کارروائی عمل میں لانے اور متاثرہ علاقوں میں ریلیف سرگرمیاں تیز کرنے کی ہدایت کر دی۔

وزیراعلیٰ کا کہنا ہے کہ متاثرہ لوگوں کو کھانے پینے اور دیگر اشیا کی فراہمی کیلئے ہنگامی اقدامات کئے جائیں، متعلقہ ضلعی انتظامیہ ہر متاثرہ فرد تک رسائی کو یقینی بنائے۔

انہوں نے کہا کہ موسم کی صورتحال بہتر ہوتے ہی ڈی آئی خان اور چترال کا دورہ کروں گا، متاثرہ علاقوں کی بحالی کیلئے خصوصی پیکج کا اعلان کروں گا۔

سیلاب زدہ علاقوں میں نقصانات کی رپورٹ طلب کرلی ہے، متاثرہ خاندانوں کے تمام نقصانات کا ازالہ کیا جائے گا۔ محمود خان نے مزید کہا کہ انفراسٹرکچر کی بحالی کیلئے ضلعی انتظامیہ کو ضروری احکامات دیے گئے ہیں.

انہوں نے کہا کہ مصیبت کی اس گھڑی میں صوبائی حکومت متاثرین کے ساتھ ہے، متاثرین کو کسی صورت تنہا نہیں چھوڑا جائے گا۔

دسرے جانب ڈیرہ اسماعیل خان کے سیلاب سے شدید متاثرہ علاقہ چودہوان میں ہنگامی بنیادوں پر پاک فوج کی جانب سے سینکڑوں سیلاب متاثرین میں راشن تقسیم کیا گیا۔

اس موقع پر میجر پاک فوج نے چئیرمین مجیب الرحمٰن خان، سابق امیدوار تحصیل ناظم درابن گوہر خان بابڑ کے ہمراہ مسلسل بارشوں سے تباہ شدہ گھروں کا دورہ کیا اور متاثرہ لوگوں کو مزید ریلیف دینے کی یقین دہانی کرائی۔

پاک فوج کے اس اقدام کو لوگوں نے خوب سراہا۔ ان کا کہنا تھا کہ آندھی ہو یا طوفان، زلزلہ ہو یا باڈر، ہر جگہ سب سے پہلے پاک فوج نظر آتی ہے۔

پاک فوج کی بے شمار قربانیوں کو کبھی فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ آخر میں مجیب خان اور گوہر خان بابڑ نے بھی پاک فوج کا شکریہ ادا کیا۔