وزیراعظم کا آرمی چیف سے رابطہ، ملک میں سیلابی صورتحال پر گفتگو

وزیر اعظم شہباز شریف نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باوجوہ اور چیئرمین نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) لیفٹیننٹ جنرل اختر نور سے ٹیلی فونک رابطہ کیا ہے۔

وزیر اعظم نے آرمی چیف اور چیئرمین این ڈی ایم اے سے سیلاب متاثرین خاص طور پر سندھ میں امداد اور بحالی کی کارروائیوں سے متعلق گفتگو کی۔

آرمی چیف نے سندھ میں امدادی کارروائیوں میں بھرپور تعاون سے متعلق آگاہ کیا۔ وزیر اعظم نے سندھ میں رابطہ سڑکوں اور پلوں کی تباہی کے باعث ہیلی کاپٹرز کی فراہمی کی ہدایت کی۔ ہیلی کاپٹرز سے ریلیف کی فراہمی میں آنے والی مشکلات کو دور کرنے میں مدد ملے گی۔

شہباز شریف نے سیلاب متاثرین کے ریسکیو اور ریلیف کے لیے پاک فوج کے تعاون اور جذبے کو سراہا۔ آرمی چیف نے آگاہ کیا کہ کمانڈر سدرن کمانڈ کو بلوچستان میں امدادی کارروائیوں کے لیے خصوصی ہدایات جاری کی ہیں۔

وزیراعظم نے سندھ میں سیلاب متاثرین کو رقوم کی ادائیگی کے لیے بے نظیر انکم سپورٹ کو ہدایت جاری کردی۔

چیئرمین این ڈی ایم اے نے وزیراعظم کو سندھ میں بارشوں اور سیلاب کی صورتِ حال سے آگاہ کیا۔ لیفٹیننٹ جنرل اختر نور نے سندھ اور بلوچستان میں امدادی کارروائیوں میں تعاون سے متعلق آگاہ کیا۔

انہوں نے وزیراعظم کو ریسکیو اور ریلیف سے متعلق اقدامات پر بریف کیا۔ وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ سیلاب متاثرین کے ریسکیو، ریلیف اور بحالی کی کوششوں کو مزید تیز کیا جائے۔

دسرے جانب آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ نے کمانڈر بلوچستان کور سے رابطہ کرکے بلوچستان حکومت سے مکمل تعاون کی ہدایت کردی۔

تفصیلات کے مطابق پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ ( آئی ایس پی آر) کی جانب سے بیان میں کہا گیا ہے کہ آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ نے کمانڈر بلوچستان کور سے رابطہ کیا اور سیلاب کی صورتحال سے متعلق آگاہی حاصل کی۔

آئی ایس پی آر نے کہا کہ آرمی چیف نے کمانڈر بلوچستان کور کو امدادی کاموں میں بلوچستان حکومت کے ساتھ مکمل تعاون کی ہدایت کی۔

آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف نے متاثرین کی جلد بحالی اورریلیف کے لیے اقدامات پر بھی زور دیتے ہوئے کہا کہ سول انتظامیہ سے ہرممکن تعاون کیا جائے۔

آرمی چیف کا کہنا تھا کہ کہ بلوچستان میں غیر معمولی بارشوں اور سیلاب سے مواصلاتی نظام کو بہت نقصان پہنچا ہے، فوج تمام ممکن وسائل بروئے کار لاتے ہوئے متاثرہ آبادی کی مدد کرے۔

جنرل قمرجاوید باجوہ نے مزید کہا کہ فوج ہنگامی بنیادوں پر انفرااسٹرکچراورمواصلاتی نظام کی بحالی پرفوری کام کرے۔

خیال رہے بارش اور سیلاب کے باعث بلوچستان ملک بھر سے کٹ کے رہ گیا ہے ، صوبے کے تمام زمینی رابطے منقطع ہوگئے جبکہ مختلف علاقوں میں اٹھارہ پل ٹوٹ گئے۔

صوبے میں اموات کی مجموعی تعداد دو سو سے زائد ہوگئی جبکہ ایک لاکھ سات ہزار سے زائد مویشی ہلاک ہوئے اور تقریبا دو لاکھ ایکڑ زمین پر پھیلی فصلوں کو نقصان پہنچا۔