محرم الحرام : علمائے کرام نے مشترکہ ضابطہ اخلاق جاری کردیا

محرم الحرام کے سلسلے میں امن و امن کے قیام اور فرقہ ورانہ ہم آہنگی کیلئے مختلف مکاتب فکر کے علما کے اجلاس میں ضابطہ اخلاق جاری کردیا گیا۔

اس حوالے سے چیئرمین متحدہ علما بورڈ پنجاب مولانا طاہر اشرفی نے اجلاس سے خطاب کرتے ہائے کہا کہ کوئی فرقہ دوسرے کے خلاف بات نہیں کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ اشتعال انگیزی سے سب کو اجتناب کرنا ہوگا، کسی کو کافر قرار دینا ریاست کا اختیار ہے ،
کسی کو کوئی حق نہیں کہ وہ دوسروں کوکافر قرار دے۔

مولانا طاہر اشرفی نے کہا کہ ہر کسی کو اپنی عبادات کرنے کا پورا پورا حق حاصل ہے، کوئی ریاست کے خلاف بات کرے تو کارروائی ریاست کی ذمہ داری ہے، جہاد کا جو پہلو ہے وہ بھی مکمل ریاست کو اختیار ہے۔

انہوں نے کہا کہ محرم الحرام کے دوران مجالس اور جلوسوں کی اجازت ہونی چاہیے، سب کی ذمہ داری ہے کہ شرپسند عناصر پر کڑی نظر رکھیں اور کہیں کوئی بھی واقعہ ہوتا ہے پولیس کو فوری طور پر اطلاع دیں۔

مولانا طاہر اشرفی کا کہنا تھا کہ توہین رسالت کے حوالے سے خصوصی عدالتیں قائم کی جائیں، ہم سب سیاست دانوں سے کہیں گے کہ مثیاق پاکستان کریں ۔

انہوں نے مزید کہا کہ پچیس سال کے لئے خارجہ اور داخلہ اور معاشی پالیسی بنائی جائے، علمائے کرام ساتھ بیٹھے ہیں گزارش ہے کہ تمام سیاستدان بھی ساتھ بیٹھیں۔