وانا، زیتون کے باغات حکومتی توجہ کے منتظر

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

جنوبی وزیرستان کے مختلف علاقوں میں زیتون کے باغات واقع ہیں تاہم حکومت کی عدم توجہ کے باعث ہر سال قیمتی زیتون ضائع ہورہا ہے۔

وانا کے علاقوں سپین اور لنڈئی وڑئی وغیرہ میں زیتون کے باغات موجود ہیں لیکن حکومت ان باغات پر کوئی توجہ نہیں دے رہی جس کی وجہ سے یہ قیمتی زیتون ضائع ہو رہے ہیں۔

سب ڈویژن وانا کے تمام علاقے قیمتی زیتون کی پیداوار کے لحاظ انتہائی موزوں ہیں لیکن حکومت کی عدم توجہی کی وجہ سے یہاں کے موزوں علاقوں سے فائدہ نہیں اٹھا گیا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ شولام کے پہاڑی علاقوں میں زیتون کے زیادہ جنگلات قدرتی طور پر پائے جاتے ہیں اگر حکومت ان جنگلات کی پیوندکاری کیلئے بڑے پیمانے پر کام شروع کردے تو ان جنگلات سے کروڑوں روپے کا زرمبادلہ حاصل کیا جاسکتا ہے۔

مالکان نے حکومت سے موجودہ باغات کے زیتون کے ضیاع کو بچانے کا مطالبہ کیا ہے۔