کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا جنگ بندی میں توسیع کا اعلان

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے امن مذاکرات کے لیے حکومت پاکستان کے ساتھ جنگ بندی میں توسیع کر دی ہے۔

ذرائع کے مطابق طالبان کی جانب سے جنگ بندی کی اطلاع عسکریت پسند گروپ کے 2 ذرائع نے دی ہے۔ گذشتہ سال افغان طالبان کے دوبارہ اقتدار میں آنے کے بعد پاکستان میں کالعدم ٹی ٹی پی کے حملوں میں تیزی دیکھنے میں آئی۔

ذرائع نے بتایا کہ کالعدم ٹی ٹی پی کی جانب سے جنگ بندی کی مدت اب 16 مئی تک بڑھا دی گئی ہے، جس پر اس سے قبل عید الفطر تک کے لیے اتفاق ہوا تھا۔

کالعدم ٹی ٹی پی کی جانب سے جنگجوؤں کو جنگ بندی کے اعلان کے لیے لکھے گئے ایک خط میں کہا گیا ہے کہ مرکزی کمان کے فیصلے کی خلاف ورزی نہ کریں۔

دونوں ذرائع نے بتایا کہ پاکستانی ثالثوں کی ایک ٹیم افغان طالبان کی معاونت سے ہونے والے مذاکرات کے لیے کالعدم ٹی ٹی پی کی قیادت سے ملنے افغانستان گئی ہے، تاہم اسلام آباد نے ابھی تک اس معاملے پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔

گذشتہ سال پی ٹی آئی حکومت نے ایک ماہ طویل جنگ بندی کے دوران کالعدم ٹی ٹی پی کے ساتھ امن مذاکرات کیے، جو بالآخر ناکام ہوگئے۔

اگست میں طالبان کے کابل پر قبضے کے بعد سے اسلام آباد نے افغانستان سے سرحد پار حملوں کی شکایت کی ہے، یہ مسئلہ دونوں ممالک کے درمیان سفارتی تناؤ کا باعث بن چکا ہے۔

گذشتہ ماہ افغان حکام نے کہا تھا کہ مشرقی افغانستان میں پاکستان کی جانب سے فضائی حملے میں 47 افراد ہلاک ہوئے تھے، پاکستان نے اس حملے پر کوئی تبصرہ نہیں کیا، لیکن کابل پر زور دیا کہ وہ عسکریت پسندوں کی کارروائیوں کو روکنے کے لیے اپنی سرحد کو محفوظ بنائے۔

افغان طالبان نے اسے “ظالمانہ حملہ” قرار دیا، جو افغانستان اور پاکستان کے درمیان دشمنی کی راہ ہموار کر رہا ہے۔ مارچ میں اسلامک اسٹیٹ کے ایک خودکش بمبار نے پشاور کی ایک مسجد میں 64 افراد کو شہید کر دیا تھا، حکام کے مطابق حملہ آور ایک افغان شہری تھا۔