حکومت کا پاک فوج کے 10 جوانوں کی شہادت پر افسوس

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

وزیراعظم عمران خان نے کیچ میں پاک فوج کے 10 جوانوں کی شہادت پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔

نجی ٹی وی کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے بلوچستان کے ضلع کیچ میں دہشت گردوں کے حملے میں پاک فوج کے 10 جوانوں کی شہادت پر افسوس کا اظہار کیا اور شہداء کے لواحقین سے اظہار ہمدردی کیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ جوانوں کے خون کا ایک ایک قطرہ ملک کے تحفظ کا ضامن ہے، بزدل دشمن کا ایک مضبوط قوم سے سامنا ہے، اس قوم نے پہلے بھی دہشت گردی کو شکست دی ہے۔

وفاقی وزیر برائے اطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ ہمارے جوان وطن عزیز کی حفاظت کے لیے اپنے سینے سامنے رکھ رہے ہیں، پوری قوم ان فوجی جوانوں کی احسان مند ہے، یقین دلاتا ہوں کہ ہمارے جوانوں کا خون رائیگاں نہیں جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ جن دہشت گردوں نے یہ بہیمانہ کام کیا، وہ اپنے انجام سے نہیں بچ سکیں گے، خون کے ایک ایک قطرے کا حساب لیا جائے گا۔

یاد رہے کہ بلوچستان کے علاقے کیچ میں سکیورٹی فورسز کی چیک پوسٹ پر دہشت گردوں کے حملے میں 10 جوان شہید ہوگئے ہیں۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق دہشت گردوں کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں ایک دہشت گرد ہلاک ہوگیا۔

آئی ایس پی آر کے مطابق سکیورٹی فورسز کی جوابی کارروائی میں 3 دہشت گرد گرفتار اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں جبکہ کلیئرنس آپریشن تاحال جاری ہے۔ آئی ایس پی آر کی جانب سے عزم کا اظہار کیا گیا کہ دہشت گردی کے خاتمے کیلئے کوئی بھی قیمت چکانے کو تیار ہیں۔

آئی ایس پی آر کے مطابق بلوچستان کے علاقے کیچ میں سکیورٹی فورسز کی چیک پوسٹ پر دہشت گردوں نے 25 اور 26 جنوری کی درمیانی رات حملہ کیا۔

دسرے جانب ہنگو میں نامعلوم افراد نے نجی کمپنی کے تیل کے کنویں پر حملہ کر کے گارڈ کو قتل کر دیا ہے اور سپروائزر کو اغوا کر کے اپنے ساتھ لے گئے، واقعے پر عوام نے گارڈ کی لاش پلانٹ کے سامنے رکھ کر شدید احتجاج کیا ہے۔

ہنگو میں واقع مول آئل اینڈ گیس کے تیل کے کنویں پر بنے گرگری پلانٹ پر نامعلوم افراد نے حملہ کر کے ایک سکیورٹی گارڈ کو قتل کر دیا ہے اور سپر وائزر کو اغوا کر کے لے گئے ہیں۔

واقعے کے بعد عوام نے لاش کو گرگری پلانٹ کے سامنے رکھ کر احتجاج کیا، ساتھ ہی سپر وائزر کی بازیابی کا مطالبہ کیا اور کہا کہ اغوا شدہ شخص کو بازیاب کیا جائے ورنہ کوئی بھی اقدام اٹھانے ہر مجبور ہوں گے۔

مظاہرین کا موقف تھا کہ یہ واقعہ ہنگو انتظامیہ کی نااہلی کی وجہ سے پیش آیا۔ اس حوالے سے ڈی ایس پی نظیر نے کہا ہے کہ جائے وقوع سے شواہد جمع کرلیے ہیں، ملزمان کی تلاش جاری ہے جنہیں جلد گرفتار کرلیا جائے گا۔

دریں اثنا وزیر اعلی خیبر پختونخوا محمود خان نے گارڈ کے جاں بحق ہونے پر شدید افسوس کا اظہار کیا ہے اور واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے مغوی کی فوری بحالی کی ہدایت کردی۔

وزیراعلی نے کہا کہ سپروائزر کی بحفاظت بازیابی کے لیے تمام تر اقدامات یقینی بنائے جائیں۔ انہوں نے شہید ہونے والے گارڈ کے اہل خان سے ہمدردی کا اظہار کیا اور پولیس کو صوبے میں تیل نکالنے والی کمپنیوں کی سکیورٹی بہتر بنانے کی ہدایت کردی۔