خیبر پختونخوا میں دہشتگردانہ حملے، 4 شہید متعدد زخمی

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

خیبر پختونخوا میں یکے بعد دیگرے دہشت گردی کے متعدد واقعات پہ عوام نے شدید تشویش کا اظہار کیا ہے۔

ضلعی پولیس آفیسر شمالی وزیرستان کے ترجمان کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ شمالی وزیرستان تھانہ حدود میر علی میں رات گئے دہشت گردوں کے خلاف LEAs کے ساتھ مل کر کاروائی کی گئی۔

اس کارروائی میں 2 دہشت گرد ہلاک ہو گئے ہیں۔ ضلعی پولیس سربراہ نے یہ بھی کہا ہے کہ شمالی وزیرستان میں دہشت گردوں کے خلاف کارروائیاں جاری رکھیں گے اور ہر قسم کے حالات کا ڈٹ کر مقابلہ کریں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں کی بزدلانہ کارروائیاں فورسزکے حوصلے پست نہیں کر سکتیں۔

شمالی وزیرستان کو دہشت گردوں نسے پاک کرکے دم لیں گے۔ دوسری جانب سوشل میڈیا پہ کالعدم تحریک طالبان کے ترجمان کی جانب سے جاری کئے گئے بیان میں کہا ہے کہ تحصیل میر علی کے مین بازار میں ٹی ٹی پی کے دہشت گردوں نے ڈی پی شمالی وزیرستان کے قافلے پہ حملہ کیا ہے۔

یہ حملے پہلے سے گھات لگا کر کیا گیا ہے۔ حملے کے نتیجے میں 1 پولیس افسر جاں بحق جبکہ دو زخمی ہوئے ہیں۔ کالعدم جماعت کے ترجمان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس حملے میں پولیس موبائل تباہ ہو گئی ہے۔

دوسری جانب ڈیرہ اسماعیل خان کی تحصیل کلاچی میں پولیو ٹیم پہ دہشت گردوں نے منظم حملہ کیا ہے۔ مقامی ذرائع کے مطابق پولیس کے خصوصی انتظامات کے باعث پولیو ٹیم اس حملے میں محفوظ رہی ہے۔

ضلعی ترجمان پولیس کے مطابق پولیو ٹیم پہ فائرنگ نہیں ہوئی ہے بلکہ دہشت گردوں کی موجودگی کی اطلاع پہ پولیس نے بکتر بند گاڑی اور بھاری نفری کے ہمراہ گرہ محبت میں دہشت گردوں کے ٹھکانے پہ چھاپہ مار کارروائی کی ہے۔

اس کارروائی میں پولیس اور دہشتگردوں کے مابین فائرنگ کا تبادلہ ہوا ہے۔ پولیس مقابلے کے دوران دہشت گرد نزدیکی جنگل کا فائدہ اٹھاتے ہوئے فرار ہو گئے ہیں۔ جن کی تلاش کیلئے پولیس کا سرچ آپریشن جاری ہے۔

ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر ڈیرہ کے مطابق ضلع میں پولیو مہم کی سکیورٹی کیلئے سخت انتظامات کئے گئے ہیں۔

علاوہ ازیں لوئر دیر کے علاقے میں دہشت گردوں نے چیک پوسٹ پہ حملہ کیا ہے، جس کے نتیجے میں ایک لیویز اہلکار شہید جبکہ ایک پولیس اہلکار شدید زخمی ہوئے ہیں۔

اس حملے بعد یہاں بھی سکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لیکر کارروائی شروع کر دی ہے۔ یاد رہے کہ گزشتہ روز کلاچی میں ایک چیک پوسٹ پہ پولیس اہلکاروں نے دہشت گردوں کا حملہ ناکام بنایا تھا جبکہ دوسری چیک پوسٹ کو شرپسندوں نے نذر آتش کر دیا تھا۔

ڈیرہ اسماعیل خان کے علاقے پروآ کے گاؤں بھٹیسر میں دو سگے بھائیوں سمیت تین افراد کو نامعلوم دہشت گردوں نے فائرنگ کر کے شہید کر دیا تھا۔ مقامی افراد کے مطابق ان تین افراد کو اہل تشیع ہونے کے جرم کی پاداش میں قتل کیا گیا ہے۔