ڈی آئی خان : اے این پی رہنماء عمر خطاب کے قاتل میں بیوی ملوث

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

ڈیرہ اسماعیل خان پولیس نے تحصیل میئر کے امیدوار عمر خطاب شیرانی کے قاتلوں کو گرفتار کر لیا ہے۔

قتل میں تیسری بیوی ملوث نکلی ہے۔ پولیس نے ملزمان کو میڈیا کے سامنے پیش کر دیا ہے اور قتل کے اس سانحہ میں دہشت گردی کا عنصر خارج از امکان قرار دیا ہے۔

ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر ڈیرہ نجم الحسنین لیاقت نے ہنگامی پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے کہ ڈیرہ پولیس نے عوامی نیشنل پارٹی کے ضلعی صدر اور تحصیل میئر ڈیرہ کے امیدوار عمر خطاب شیرانی کے قاتلوں کو گرفتار کر لیا ہے۔

قتل کی واردات میں عمر خطاب کی تیسری بیوی ملوث ہے۔ تیسری بیوی انیتہ قاتلوں کی ساتھی نکلی ہے۔ عمر خطاب شیرانی بلدیاتی انتخابات میں عوامی نیشنل پارٹی کے نامزد امیدوار برائے سٹی میئر تھے۔ عمر خطاب شیرانی کو بلدیاتی الیکشن سے ایک دن قبل قتل کیا گیا تھا۔

ڈی پی او نجم الحسنین لیاقت کہا کہ واقعہ میں ملوث بیوی سمیت تین افراد کو آلہ قتل سمیت گرفتار کر لیا گیا ہے۔ عمر خطاب کا قتل سیاسی ہے نہ دہشت گردی کا عنصر ہے، خالصتاََ خانگی معاملہ ہے۔

بیوی نے آپنے اشنا عبدالحکیم کے ساتھ مل کر یہ گھناؤنا کھیل کھیلا ہے جس میں تمام ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

پولیس نے گہری تفتیش کے بعد ملزمان کو گرفتار کیا ہے۔

یاد رہے ڈی آئی خان میں بلدیاتی انتخابات سے ایک روز قبل تحصیل میئر کے امیدوار عمر خطاب شیرانی کو قتل کر دیا گیا تھا، جس کے باعث ڈی آئی خان سٹی میں میئر کے انتخابات ملتوی کر دیئے گئے تھے .

پاکستان پیپلز پارٹی کے سیکرٹری اطلاعات فیصل کنڈی اور مقتول عمر خطاب شیرانی کے بیٹے نے وفاقی وزیر برائے امور کشمیر علی امین گنڈہ پور کو اس قتل کا ذمہ دار قرار دیا تھا، تاہم قاتلوں کے گرفتار ہونے کے بعد یہ افواہیں اپنی موت آپ مر گئی ہیں۔