پاراچنار : عظیم صوفی بزرگ و شاعر شاہ انور میاں کی یاد میں سیمینار کا انعقاد

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

عظیم صوفی بزرگ شاعر اور روحانی پیشوا شاہ انور میاں کی یاد میں ایک سیمینار کا انعقاد کیا گیا، جس میں سیاسی و سماجی شخصیات سمیت ماہرین تعلیم نے بھی کثیر تعداد میں شرکت کی۔

گورنر کاٹیج پاراچنار میں منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر پروفیسر اباسین یوسفزئی، ڈاکٹر پروفیسر اسیر منگل، ڈاکٹر مقیل حسین میاں اور ڈاکٹر پروفیسر نور الامین نے کہا کہ میاں شاہ انور پشتو نےشاعری کے تیسرے دور میں 1720 سے 1790 میں اس خطے میں صوفیانہ شاعری اور دینی خدمات سے اسلامی تعلیمات کو عام کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔

انہوں نے کہا کہ آج خطے میں انکے لاکھوں عقیدت مند ان کے روحانی فیض سے فیضیاب ہورہے ہیں.

مقررین نے کہا کہ روحانی پیشوا میر انور شاہ کے کلام میں امن و محبت اور بھائی چارے کا پیغام ہے اور یہ اللہ کے وہ بندے ہیں جن کو اللہ تعالیٰ نے لوگوں کے دلوں میں خیر، رحم اور محبت کے جذبے جگانے کیلئے منتخب کئے ہیں۔

مقررین نے کہا کہ بدقسمتی سے میر انور شاہ کا کلام تین سو سال سے عام لوگوں سے مخفی رہا، آج ہم ان کے کلام سے روشناس ہوگئے ہیں اور ان شاء اللہ ان کے کلام و پیغام کو عام کرنے میں اپنا کردار ادا کریں گے۔

سیمینار کے دوران متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ کلایہ اورکزئی میں میاں شاہ انور کے تین سو سالہ قدیم مزار و درگاہ کی تعمیر و مرمت کیساتھ ساتھ مزار کو زائرین کیلئے مکمل طور پر کھولنے کا مطالبہ کیا گیا .

انہوں نے کہا کہ بدامنی کے دور میں مزار زائرین کی آمد کے لئے بد امنی کے دور میں بند کیا گیا تھا اب فورسز کی قربانیوں سے امن قائم ہوگیا ہے اور مزار زائرین کے کیے نہ کھولنا نا انصافی ہے۔