کرم میں صرف چند عناصر بدامنی کا سبب بن رہے ہیں

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

ضلع کرم کے سیاسی و سماجی رہنماؤں نے کہا ہے کہ ضلع کرم میں پچانوے فیصد لوگ امن چاہتے ہیں، صرف چند عناصر بدامنی کا سبب بن رہے ہیں، حکومت اس قسم کے عناصر کی حوصلہ شکنی کرے۔

پاراچنار میں مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ضلع کرم میں پانی، جنگل اور زر و زمین کے تنازعات کو فرقہ واریت کا رنگ دے کر علاقے کے امن کو سبوتاژ کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جو کسی صورت عوام کو قبول نہیں۔ رہنماؤں نے کہا کہ عوام مزید ناانصافی اور ظلم برداشت نہیں کرسکتے، اس لئے بدامنی کا موجب بننے والے عناصر کے خلاف موثر اقدامات اٹھائے جائیں اور مزید لاپرواہی اور غفلت سے گریز کیا جائے۔

رہنماؤں نے پیواڑ علیزئی اور گیدو قبائل کے مابین جنگل کا تنازعہ فوری طور پر حل کرنے پر زور دیا اور کہا کہ لڑائی جھگڑے کسی مسئلے کا حل نہیں.

انہوں نے کہا کہ ضلع کرم کے نوجوان امن چاہتے ہیں اور تمام قبائل مسالک کے لوگوں کو ساتھ ملا کر پائیدار امن کے قیام کیلئے راہ ہموار کرنا چاہیئے۔

رہنماؤں نے قبائل کے مابین مسائل کے حل میں غفلت برتنے والے افسران کے فوری تبادلے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے اعلیٰ حکام سے مسائل کے حل کیلئے فوری اقدامات کرنے اور ایک منصفانہ اور مضبوط کمیشن بنانے مطالبہ کیا۔