دریاؤں کی آلودگی ختم کرنے کے لیے جامع منصوبہ پیش کرنے کا حکم

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت کلائمٹ چینج کمیٹی کے اجلاس میں وزیر اعظم نے آبی آلودگی کے خاتمے کے لیے 4 ماہ میں جامع حکمت عملی پیش کرنے کی ہدایت کردی۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت کلائمٹ چینج کمیٹی کا اجلاس ختم ہوگیا، اجلاس میں پنجاب، پختونخواہ اور گلگت بلتستان کے وزرائے اعلیٰ، وفاقی وزرا، معاون خصوصی ملک امین اسلم، ورلڈ بینک حکام اور اقوام متحدہ کے نمائندے شریک ہوئے۔

اجلاس میں دریائی اور فضائی آلودگی کے خاتمے کے لیے اہم فیصلے کر لیے گئے۔ معاون خصوصی برائے ماحولیات ملک امین اسلم نے شرکا کو گلاسکو کانفرنس کوپ 26 پر بریفنگ بھی دی۔

اجلاس میں ماحولیاتی تبدیلی پر مربوط حکمت عملی پر مبنی جامع پلان بھی پیش کیا گیا۔ وزیر اعظم نے ملکی دریاؤں کو بچانے کے لیے حکمت عملی بنانے کی ہدایت کی اور معاون خصوصی ملک امین اسلم کو 4 ماہ میں مکمل پلان پیش کرنے کا کہا۔

وزارت موسمیاتی تبدیلی اور اقوام متحدہ کی ایجنسیز مشترکہ پلان تیار کریں گی۔

وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان کی بقا کے لیے دریا زندگی کا بڑا ذریعہ ہیں، دریاؤں کو آلودگی سے بچانا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ یہ پاکستان کا اہم مسئلہ ہے مگر افسوس اس پر سابقہ حکومتوں نےتوجہ نہ دی۔

اجلاس میں ورلڈ بینک کی پاکستان کو آسان شرائط پر قرض فراہم کرنے کی تجویز بھی منظور کرلی گئی۔ ورلڈ بینک حکام کا کہنا تھا کہ ماحولیاتی شعبے میں پاکستان کو آسان شرائط پر قرض دیں گے، 1 ارب ڈالرز کا قرض دیا جاسکتا ہے۔

ورلڈ بینک کی جانب سے کہا گیا کہ پاکستان کی کلائمٹ چینج حکمت عملی متاثر کن ہے۔

وزیر اعظم نے کلائمٹ چینج وژن میں ملک امین اسلم کی کارکردگی کو سراہتے ہوئے کہا کہ ملک امین نے دیے گئے اہداف پر زبردست انداز میں پیش رفت دکھائی۔

وزیر اعظم نے گلاسکو میں نیشنل ڈیٹرمنڈ کنٹری بیوشن (این ڈی سی) پالیسی کے لیے وزارت ماحولیات کو رابطہ کار باڈی بھی نامزد کر دیا۔