قبائلی اضلاع میں پولیس کی ذمہ داریاں مزید بڑھ گئی

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

انسپکٹر جنرل آف پولیس خیبر پختونخوا معظم جاہ انصاری نے کہا ہے کہ لیویز اور خاصہ داروں کی پولیس فورس میں انضمام ایک کٹھن اور مشکل مرحلہ تھا تاہم خیبر پختونخوا پولیس نے یہ عمل کامیابی سے مکمل کرکے بہترین پولیسنگ کی داغ بیل ڈال دی ہے۔

یہ بات انہوں نے شاہ کس پولیس ٹریننگ سنٹر کے افتتاح کے موقع پر خطبہ استقبالیہ پیش کرتے ہوئے کیا جس میں سنیئر وزیر برائے محنت و افرادی قوت شوکت یوسفزئی تقریب کے مہمان خصوصی تھے۔

تقریب میں ڈائریکٹر آئی این ایل، یوایس کونسل جنرل پشاور، آئی جی فرنٹیئر کور، صوبائی وزراءو ممبران صوبائی اسمبلی اور دیگر افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔

آئی جی پی نے کہا کہ خطے میں بالخصوص پاک افغان سرحد پر حالات تیزی سے امن کی طرف بڑھ رہے ہیں اور یہاں پر امن کے قیام سے پوری دنیا کی امن پر مثبت اثر پڑے گا۔

انہوں نے کہا کہ ضم شدہ اضلاع میں بہترین پولیسنگ کے فروغ کے لیے ترجیحات کا تعین کردیا گیا ہے جن کو بتدریج عملی جامہ پہنایا جارہا ہے۔

آئی جی پی معظم جاہ انصاری نے کہا کہ نئے شاہ کس پولیس ٹریننگ سنٹر میں لیویز اور خاصہ داروں کے اب تک 17000 جوانوں کو بنیادی تربیت سے آراستہ کیا جاچکا ہے۔ جبکہ باقی ماندہ اہلکاروں کی تربیت جون 2022 تک مکمل کرلی جائیگی۔

آئی جی پی کا مزید کہنا تھا کہ شاہ کس پولیس ٹریننگ سنٹر کی تربیت کا اعلیٰ معیار جدید دور کے عین مطابق ہے اور فوکل پوائنٹ پر واقع ہونے سے یہ ہر حوالے سے تربیت کے لیے موزوں سنٹر ہے .

انہوں نے کہا کہ لیویز اور خاصہ داروں کی بنیادی تربیت مکمل کرنے کے بعد ان کے لیے پولیس کے سپیشلائزڈ سکولوں میں ٹریننگ شروع کیا جائیگا۔

آئی جی پی نے کہا کہ قبائلی علاقہ جات کا خیبر پختونخوا میں انضمام کے بعد پولیس کی ذمہ داریاں مزید بڑھ گئی ہیں۔ تاکہ ضم شدہ اضلاع کے جوان ان سے بطریق احسن نبرد آما ہونے کے لیے تیار ہیں۔

آئی جی پی نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاک فوج اور پولیس اسٹرٹیجک پارٹنرز ہیں اور پولیس اہلکاروں کو تربیت سے آراستہ کرنے میں فوج کی کردار کی تعریف کی۔

آئی جی پی نے کہا کہ پولیس جوانوں کی بہترین فلاح و بہبود ان کی اچھی تربیت ہے اور اس عزم کا اعادہ کیا کہ شاہ کس پولیس ٹریننگ کو سنٹر آف ایکسیلنس بنا کر مستقبل میں تربیت کے حوالے سے ایک قومی اثاثہ ثابت کریں گے۔

آئی جی پی نے نئے ضم شدہ اضلاع میں پولیسنگ کے حوالے سے اُٹھائے گئے اقدامات پر بھی تفصیل سے روشنی ڈالی اور کہا کہ سیکیورٹی فورسز، قانون نافذ کرنے والے اداروں اور عوام کی بے مثال قربانیوں کی بدولت قائم ہونے والے امن کو ہر قیمت پر برقرار رکھا جائے گا۔

آئی جی پی نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ خطے میں امن کے قیام کے لیے بین الاقوامی برادری کے ساتھ ملکر کوششوں کو آگے بڑھایا جائیگا اور دیر پا امن کے قیام کے لیے شاہ کس پولیس ٹریننگ سنٹر کی سہولیات سے بھر پور استفادہ کیا جائیگا۔

آئی جی پی نے شاہ کس پولیس ٹریننگ سنٹر میں مختلف براجیکٹس تعمیر کرنے پر آئی این ایل کی کوششوں کی تعریف کی۔ آئی جی پی نے تقریب کے اختتام پر معزز مہمانوں کو سونیئر اور پولیس شیلڈز بھی پیش کئے۔