پاکستان کی امریکہ کیساتھ فضائی حدود کے معاہدے کی تردید

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

دفترخارجہ نے پاکستان اور امریکا کے درمیان افغانستان میں فوجی آپریشن کے لیے پاکستانی فضائی حدود کے استعمال کے معاہدے کی تردید کردی ہے۔

ترجمان دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان اور امریکا کے درمیان ایسے کسی معاہدے پربات چیت نہیں ہورہی ہے۔

ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ پاکستان اور امریکا کا علاقائی سلامتی اور دہشت گردی کے خلاف جنگ پر دیرینہ تعاون ہے لہذا دونوں ممالک دہشتگردی کے خلاف جنگ میں دونوں ممالک رابطے میں ہیں۔

امریکی نشریاتی ادارے سی این این نے دعویٰ کیا ہے کہ امریکا کی جانب سے پاکستان کی فضائی حدود استعمال کرنے کےلیے معاہدہ آخری مراحل میں ہے۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان انسداد دہشت گردی کے آپریشن اوربھارت سے تعلقات کے معاملے میں مدد کے بدلے مفاہمت کی یاداشت پر دستخط کرنے کےلیے تیار ہے۔

دسرے جانب افغانستان میں فوجی آپریشن کے لیے فضائی حدود کے استعمال پر امریکا اور پاکستان معاہدے کے قریب پہنچ گئے ہیں۔

امریکا کے سرکاری نشریاتی ادارے سی این این کے مطابق جوبائیڈن انتظامیہ نے امریکی اراکین کانگریس کو پاکستان کے ساتھ ہونے والے سمجھوتے سے آگاہ کر دیا ہے۔

سی این این کی رپورٹ کے مطابق امریکی اراکین کانگریس کو پاکستان کے ساتھ ہونے والے سمجھوتے سے گزشتہ روز آگاہ کیا گیا۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان نے فضائی حدود کے استعمال کے بدلے امریکا سے انسداد دہشتگردی کے لیے امداد کی فراہمی کے ایم او یو کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔

امریکی نشریاتی ادارے کا کہنا ہے کہ پاکستان نے فضائی حدود کے استعمال کے بدلے بھارت سے تعلقات کے معاملے میں مدد کی بھی خواہش ظاہر کی ہے۔

سی این این کے ذرائع کے مطابق امریکا سے پاکستان کے مذاکرات جاری ہیں، سمجھوتے کو حتمی شکل نہیں دی گئی اور اس میں تبدیلی بھی ہوسکتی ہے۔