نتھیا گلی میں گورنر و وزیراعلیٰ ہاؤسز عوام کیلئے کھولنے کا فیصلہ واپس

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

خیبر پختونخوا کے سیاحتی مقام نتھیا گلی میں گورنر ہاؤس اور وزیراعلیٰ ہاؤس کو عوام کے لیے کھولنے کا فیصلہ واپس لے لیا گیا ہے۔

وزیراعظم کی ہدایت پر نتھیا گلی میں گورنر اور وزیراعلیٰ ہاؤسز کو عوام کے لیے کھولنے کا فیصلہ کیا گیا تھا، نتھیا گلی میں صوبے کے ان دونوں بڑے گھروں کے لیے کرایہ بھی مقرر کیا گیا تھا.

میڈیا رپورٹ کے مطابق سرکاری رہائش گاہوں کے لیے اتنے کرائے مقرر کیے گئے تھے جو عوام کی پہنچ سے دور رہے.

گورنر ہاؤس کا ایک دن کا کرایہ 40 ہزار روپے، وزیراعلیٰ ہاؤس کا کرایہ 24 ہزار، اسپیکر ہاؤس 14 ہزار جب کہ پولیس ریسٹ ہاؤس کا یومیہ کرایہ 12 ہزار روپے کرایہ مقرر کیا گیا تھا لیکن دو سال قبل ہونے والے فیصلے پر عمل درآمد کیے بغیر واپس لے لیا گیا ہے۔

حکومتی ذرائع کے مطابق وزیراعلیٰ اور گورنر ہاؤسز کو نجی تحویل میں نہ دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کی وجہ سرکاری مہمانوں کو قراردیا جارہا ہے.

حکومت کا موقف ہے کہ سرکاری مہمانوں کے لیے ان دو بڑے گھروں کی ضرورت ہے، اس لئے دونوں بڑے گھر سرکاری تحویل میں ہی رہیں گے.

اسپیکر ہاؤس کو بھی بچانے کی کوششیں تیز کردی گئیں، اسپیکر ہاؤس کو نجی تحویل میں نہ دینے کے حوالے سے معاملہ اسمبلی میں اٹھایا جاچکا ہے جب کہ ایک بار پھر معاملہ اسمبلی میں اٹھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔