پاکستان کا افغانستان کو انسانی بنیادوں پر امداد فراہم کرنے کااعلان

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

پاکستان نے افغانستان کو انسانی بنیادوں پر پانچ ارب روپے کی امداد فراہم کرنے کااعلان کردیا، امداد میں ادویات اور خوراک شامل ہوگی۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان کے نمائندہ خصوصی برائے افغانستان محمد صادق نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں کہا کہ وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے دورہ کابل میں پاکستان کی جانب سے پانچ ارب روپے کی امدادی اشیا افغانستان کو فراہم کرنے کا اعلان کیا ، جن میں ادویات اور خوراک شامل ہوگی۔

پاکستان کے نمائندہ خصوصی برائے افغانستان کا کہنا تھا کہ افغانوں کی آسانی کیلئے گیٹ پاس ختم کرنے کا اعلان کیا ہے، طبی بنیادوں پر پاکستان آنیوالے افغانیوں کو ویزا آن آرائیول دیا جائے گا اور پی سی آر ٹیسٹ کی شرط ختم کر رہے ہیں جبکہ افغان تاجروں کو طورخم پر ایک ماہ کا آمد پر ویزا دیا جائے گا جبکہ طورخم بارڈر 24 گھنٹے تجارت کے لیے کھلا رہے گا۔

محمد صادق نے کہا کہم پاکستان افغانستان کی تجارتی سطح پر مدد کرے گا، پیدل بارڈر کراس کرنے والوں کیلئے بارڈر روزانہ بارہ گھنٹے کیلئے کھولا جائے گا، ۔بارڈرسے صرف وہی لوگ آسکیں گے جن کے پاس ویزہ ہے ، افغان ٹرک کراچی میں بھی داخل ہوسکیں گے۔

پاکستانی سفارتخانہ بزنس مین کو پانچ سال کا ویزہ دے گا جبکہ افغانستان سے پاکستان آنےو الے پھل اور سبزیوں پر ڈیوٹی نہیں ہوگی۔

وزیر خارجہ شاہ محمودقریشی کا مزید کہنا تھا کہ پاکستانی سفارتخانے کو پانچ سال کے ملٹی انٹری ویزا کے اجراء کا اختیار دے دیا ہے جبکہ پیدل بارڈر کراس کرنے والوں کیلئے دورانیہ 8 گھنٹے سے 12 گھنٹے کھلا ہوگا اور تجارت کیلئے سرحد 24 گھنٹے کھلی رہے گی۔

وزیرخارجہ کی افغانستان کے عبوری وزیر اعظم ملاحسن آخوند سے ملاقات

دوسرے جانب وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے افغانستان کےعبوری وزیر اعظم ملاحسن آخوند سے ملاقات میں کہا کہ پاکستان افغانستان میں دیرپا امن اوراستحکام کاخواہاں ہے۔

 کابل میں وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کی افغانستان کےعبوری وزیر اعظم ملاحسن آخوند سے ملاقات ہوئی ، ملاقات میں افغان عبوری حکومت کے وزیر خارجہ امیر خان متقی بھی موجود تھے جبکہ اعلیٰ عسکری قیادت وپاکستانی وفد کے دیگر اراکین بھی ملاقات میں شریک ہوئے۔

ملاقات میں باہمی دلچسپی کے امور ،تجارتی و اقتصادی شعبہ جات میں تعاون سمیت افغان عوام کومعاشی بحران سے نکالنے کیلئے مختلف پہلوؤں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

ملا حسن آخوند نے شاہ محمودقریشی اور وفد کو کابل آمدپرخوش آمدید کہا ، اس موقع پر شاہ محمودقریشی نے کہا پاکستان افغانستان میں دیرپا امن اوراستحکام کاخواہاں ہے اور انسانی بنیادوں پرافغان بھائیوں کی مددکیلئےپرعزم ہے۔

وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان افغانستان کےساتھ دو طرفہ تجارت بڑھانے کا متمنی ہے اور پاکستان خطے میں امن واستحکام کیلئے کردار ادا کرنے کیلئے پرعزم ہے۔

افغانستان کےعبوری وزیر اعظم ملاحسن آخوند نے انسانی امداد کی بروقت فراہمی پر پاکستانی قیادت کا شکریہ ادا کیا۔

پہلی بار وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اہم دورے پر کابل پہنچ گئے

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اہم دورے پر کابل پہنچ گئے، دورے کے دوران شاہ محمود قریشی عبوری وزیراعظم ملا حسن آخوند اور امیرخان متقی و دیگر سےملاقات کریں گے۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی ایک روزہ دورےپرکابل پہنچ گئے ، ڈی جی آئی ایس آئی لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید ، چیئرمین پی آئی اے،نادرا،ایف بی آر،وزارت خارجہ کے افسران بھی ان کے ہمراہ ہیں۔

ہوائی اڈے پر افغانستان کےعبوری وزیرخارجہ امیرخان متقی نے شاہ محمود قریشی کا استقبال کیا، اس موقع پر پاکستانی سفیر،وزارت خارجہ افغانستان کےحکام بھی موجود تھے۔

دورے کے دوران وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی عبوری وزیراعظم ملا حسن آخوند،امیرخان متقی و دیگر سےملاقات کریں گے ، ملاقات میں دوطرفہ تعلقات،تجارت میں تعاون بڑھانےپرغورکیاجائےگا۔

وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی دیگر افغان قائدین سےبھی ملاقاتیں کریں گے، جس میں افغان قائدین کو پاکستان کےنقطہ نظر سے آگاہ کریں گے۔

اس موقع پر شاہ محمودقریشی کا کہنا تھا کہ پاکستان علاقائی امن،استحکام کیلئےکاوشیں بروئےکارلارہاہے، پاکستان نےافغانستان سے بارڈر کراسنگ پوائنٹس میں اضافہ کیا۔

وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ پاکستان نےسفری سہولت کےلیےنئی ویزہ رجیم متعارف کرائی، ہم افغانستان سےتجارت کےفروغ کیلئے کوشاں ہیں، کارگوکی آمدو رفت میں سہولت کی فراہمی کیلئےکوشاں ہیں۔