“افغانستان کے داخلی معاملات میں ایران اور پاکستان مداخلت نہیں کر رہے”

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

افغانستان میں طالبان کے نائب وزیر اطلاعات ذبیح اللہ مجاہد نے کہا ہے کہ پاکستان اور ایران جیسے ممالک افغانستان کے داخلی اُمور میں مداخلت نہیں کر رہے۔

کابل میں عبوری کابینہ میں توسیع کے اعلان کے سلسلے میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان اور کچھ دیگر ممالک کے افغانستان کے ساتھ سیاسی رابطے ہیں اور افغان حکومت ملک کی بہتری کے لیے ایسے ممالک کے مشوروں کا خیر مقدم کرتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ایران کی طرح دوسرے ممالک بھی اُن کے ساتھ رابطے میں ہیں۔

سفارتی سطح پر ایسے ادارے ہیں، جو چاہتے ہیں کہ افغانستان میں امن قائم ہو اور اور وہ اس حق میں نہیں ہیں کہ ہمارے داخلی کاموں میں مداخلت کریں یا داخلی سطح پر رکاوٹیں پیدا کریں.

انہوں نے کہا کہ یہ ممالک خیر خواہی کا اظہار کرتے ہیں اور ان کے خیر خواہی کے مشوروں کا وہ خیر مقدم کرتے ہیں۔

ترجمان طالبان حکومت نے امن، استحکام اور جامع افغان حکومت کے لیے وزیراعظم عمران خان کی کوششوں کو سراہا۔

ان کا کہنا تھا کہ گروپ نے افغانستان کے حوالے سے وزیراعظم عمران خان کے مثبت بیانات کو اپنے اندرونی معاملات میں مداخلت کے طور پر نہیں دیکھا۔

ذبیح اللہ مجاہد نے لڑکیوں کی تعلیم کے حوالے سے کہا کہ اُنھیں جلد از جلد سکول جانے کی اجازت دے دی جائے گی۔