خیبر طورخم بارڈر 24/7 منصوبے کا افتتاح، تجارتی حجم 3.5 میلینز

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

وزیراعظم عمران خان نے طورخم ٹرمینل توسیعی منصوبہ کا افتتاح کردیا، طورخم ٹرمینل پورا ہفتہ 24 گھنٹے سروس فراہم کرے گا۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ طورخم کے راستے سینٹرل ایشیا تک تجارت ہوگی، پشاور پاکستان کا تجارتی حب بنے گا، طور خم ٹرمینل کھولنے سے ہی تجارت میں 50فیصد اضافہ ہوگیا ہے، اس سے تجارتی روابط بڑھنے سے روزگار کے مواقع بھی پیدا ہوں گے.

انہوں نے کہا کہ برآمدات اور درآمدات کے تاریخی خسارے کی وجہ سے رویپہ گرا، جس سے سب چیزیں مہنگی ہوئیں۔

واضح رہے کہ وزیر اعظم عمران خان کی آمد کے موقع پر طورخم ہیلی پیڈ سے زیرو پوائنٹ تک تمام راستوں کو وزیر اعظم کے تصاویر اور بینرز سے سجھایا گیا ہے، جبکہ افغان صدر اشرف غنی کے پورٹریٹس بھی نصب کیے گئے ہیں۔

وزیر اعظم عمران خان طورخم 24/7 منصوبے کے افتتاح کے علاوہ طورخم پی ٹی ڈی سی عمارت میں قائم پاک افغان دوستی اسپتال کا افتتاح اور معائنہ بھی کریں گے۔

وزیر اعظم کو 7/24منصوبہ، زیر تعمیر طورخم ٹرانزٹ ٹرمینل، کسٹم کلیئرنس کے طریقہ کار، امیگریشن سمیت پاک افغان بارڈر کے سیکورٹی صورتحال پر تفصیلی بریفنگ بھی دی گئی۔

دورہ طورخم بارڈر کے موقع پر ان کے ہمراہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر اعلی خیبر پختونخواہ محمود خان، گورنر خیبر پختونخواہ شافرمان خان، افغانستان کے سفیر،صوبائی وزراء سمیت پی ٹی آئی کے رہنماء موجود تھے۔

یاد رہے کہ اس منصوبے کا افتتاح یکم ستمبر کو ہونا تھا اور اس ضمن میں تمام ضروری اقدامات اور تیاریاں مکمل کرلی گئی تھیں لیکن کابل کی صورتحال کے باعث اس فیصلے کو موخر کرنا پڑا.

وزیراعظم عمران خان طورخم کے 24 گھنٹے فعال رہنے والے نئے ٹرمینل کے افتتاح کر رہے ہے
وزیراعظم نے کہاکہ دعا ہے افغانستان میں امن قائم ہو، افغانستان میں امن سے خطہ ترقی کرے گا، امن سے پشاور تجارت کا حب بن جائیگا، طورخم بارڈر سسٹم سے وسطی ایشیائی ریاستوں کو بھی فائدہ ہوگا۔
طورخم کے 24 گھنٹے فعال رہنے والے نئے ٹرمینل کے منصوبے سے پاکستان افغانستان کے درمیان تجارت کو فروغ ملے گا اور لوگوں کی قسمت بدلے گی
طورخم بارڈر 24/7 منصوبے کے افتتاح کے موقع پر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان اور گورنر شاہ فرمان کے علاوہ دیگر اعلیٰ وفاقی و صوبائی حکام بھی وزیراعظم کے ہمراہ موجود تھے۔