‘کالعدم تحریک طالبان کی پاکستان میں گنجائش نہیں ‘

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

وزیر داخلہ شیخ رشید نے کہا ہےکہ وزیراعظم عمران آئندہ دنوں میں افغانستان کی صورتحال پر دنیا سے خطاب کریں گے۔

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ ہم پر مہاجرین کا بوجھ نہیں، طورخم چمن کے راستے کھلے ہیں، 5 دنوں میں تجارت میں 50 فیصد اضافہ ہوا ہے، چمن بارڈر پاکستان اور افغانستان کیلئے تجارتی راستہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں کالعدم ٹی ٹی پی کو دہشتگردی کی اجازت نہیں دیں گے، بلوچستان کے حالات کو کچھ لوگ خراب کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور بھارت پاکستان کے خلاف سازشوں میں ملوث ہے.

انہوں نے کہا کہ بھارت کالعدم ٹی ٹی پی اور بی ایل اے کے ذریعے دہشتگردی میں ملوث ہے، بھارت کے افغانستان میں تمام قونصلیٹ پاکستان کے خلاف استعمال ہو رہے تھے۔

وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ جو افغانستان میں ہوا اس سے بھارت کو تکلیف ہونا لازمی امر ہے، بھارت میں جو صفِ ماتم بچھی ہے ان کے چہروں پر شکست عیاں ہے، بھارت کو منہ کی کھانا پڑی ہے اور وہ تلوے چاٹ رہا ہے، بھارت سی پیک کے خلاف سازش میں ملوث ہے.

انہوں نے کہا کہ دستانے پہنے ہوئے ایسے ہاتھ ہیں جو سی پیک کو نقصان پہنچانا چاہتے ہیں لیکن دنیا کی کوئی طاقت سی پیک میں رکاوٹ نہیں بن سکتی، سی پیک پر کام کرنے والے تمام چینی باشندوں کو سکیورٹی فراہم کی جائے گی۔

انہوں نے مزید کہا کہ افغانستان کا مسئلہ افغانوں کا اپنا ہے اور پاکستان براہ راست افغانستان کے کسی مسئلے میں ملوث نہیں بلکہ پاکستان افغانستان میں انخلا میں بھرپور کردار ادا کر رہا ہے، وزیراعظم عمران خان دس پندرہ دنوں میں افغانستان کی صورتحال پر دنیا سے خطاب کریں گے۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ ذبیح اللہ مجاہد اور سہیل شاہین کا انٹرویو سنا ہے۔ انہوں نے گارنٹی دی ہے کہ افغانستان کی سرزمین کسی ملک کے خلاف استعمال نہیں ہو گی۔

وزیر داخلہ نے اپوزیشن کو مشورہ دیا کہ یہ ڈومیسٹک سیاست کا وقت نہیں، پی ڈی ایم کو سمجھنا چاہیے اگلے 6 ماہ عالمی سیاست کے لیے اہم ہیں، پی ڈی ایم میں مولانا فضل الرحمٰن کو خطے کی سیاست کی سمجھ ہے باقی انڈر 19 کی ٹیم ہے۔