ہشام انعام اللہ کا علی امین گنڈاپور اور گورنر خیبر پختونخوا کو چیلنج

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

خیبر پختونخوا کی وزارت سماجی بہبود سے فارغ کئے گئے پی ٹی آئی رکن اسمبلی ہشام انعام اللہ نے علی امین گنڈاپور اور گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان کو ان پر لگائے گئے الزام ثابت کرنے کا چیلنج دے دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ہشام انعام اللہ سے وزارت کا قلمدان واپس لینے پر لکی مروت سے وزیراعلیٰ اور گورنر ہاؤس کے سامنے احتجاج کیلئے جانے کے لیے لوگوں کی بڑی تعداد کرم پل پر جمع ہوئی، اس احتجاج میں پاکستان تحریک انصاف کے ضلعی اور صوبائی ذمہ داران بھی شامل تھے تاہم مظاہرین کو احتجاج سے روکنے کیلئے ہشام انعام اللہ پہنچ گئے۔

اس موقع پر ہشام انعام اللہ نے وفاقی وزیر علی امین گنڈاپور اور گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان کو چیلنج کیا کہ وہ قرآن پر ہاتھ رکھ کر مجھ پر کرپشن اور کمیشن لینا ثابت کریں، میں بھی قرآن پر ہاتھ رکھ کر ثابت کروں گا کہ کبھی کمیشن نہیں کھایا۔

ہشام انعام اللہ نے کہا کہ علی امین گنڈاپور اور شاہ فرمان نے دوستی کی آڑ میں ان کی پیٹھ میں چھرا گھونپا ہے، خود کو شیر کہنے والے نے پیچھے سے وار کیا ہے، شیر تو جانور ہوتا ہے اب ہمارا مقابلہ ایک جانور سے ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہماری قوم اس وقت زخمی ہے اور جب انسان زخمی ہوتے ہیں تو وہ شیر کو پچھاڑ دیتے ہیں، علی امین نہیں چاہتے کہ خیبر پختونخوا کے جنوبی اضلاع میں ان کے علاوہ کوئی ترقی کرے، علی امین نے بھائی کو وزارت دلوانے کیلئے سب کچھ کیا ہے، لوگ اور میڈیا کہہ رہا ہے کہ شاہ فرمان کو کروڑوں کی بندوقیں تحفے میں ملی ہیں۔

سابق صوبائی وزیر نے کہا کہ علی امین گنڈاپور اور شاہ فرمان سے پشتون روایات کے مطابق بات کریں گے کہ انہوں نے مروت قوم اور مجھ سے یہ زیادتی کیوں کی ہے؟ کچھ مقامی پی ٹی آئی ذمہ داران اور دوسرے لوگ بھی اس سازش کا حصہ ہیں، ان سے بھی قوم جرگہ کرے گی۔

عمران خان اور وزیر اعلی کا مشکور ہوں کہ انہوں نے ہمیشہ میری حوصلہ افزائی کی، میں کوئی فارورڈ بلاک بنانے نہیں جا رہا۔