پولیس کی فائرنگ نوجوان قتل: خیبرپختونخوا حکومت نے پنجاب وزیراعلیٰ کے ساتھ معاملہ اٹھا لیا

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

پنجاب کے ضلع اٹک میں پولیس کی جانب سے چلتی گاڑی پر فائرنگ سے دیر کے رہائشی ایک شخص کی ہلاکت کے واقعے پر وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے ایکشن لے لیا اور معاملہ پنجاب کے وزیراعلیٰ کے ساتھ اٹھا لیا۔

نمائندہ ٹرائبل پریس  کے مطابق چکدرہ کا رہائشی مسمی ساجد ولد عبدالرحمن ساکن چکدرہ امیر آباد ( سابقہ ناظم چکدرہ ) گزشتہ روز اپنی گاڑی اسلام آباد سے لوئر دیر چکدرہ لے آ رہا تھا کہ راستے میں ضلع اٹک حضرو میں پولیس نے اشارہ کیا لیکن وہ نہ رکا جس پر پولیس نے فائرنگ کر کے ان کو قتل اور اسکے ایک ساتھی کو زخمی کیا۔

اس واقعے کے خلاف دیر ادنیزائی کے عوام اور مقامی باشندوں نے احتجاج کرکے روڈ بلاک کیا۔ سابق ناظم عبد الرحمن نے بتایا کہ حضرو پولیس نے انکے جواں سال بیٹے کو شہید کیا اور اسکے ایک ساتھی کو زخمی کیا انہوں نے کہا کہ اس واقعے کے خلاف حضرو پولیس کے خلاف ایف آئی آر درج کردی گئی ہے۔

دوسری جانب وزیر اعلی خیبر پختونخوا محمود خان نے معاملہ وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار کے ساتھ اٹھایا لیا۔ وزیر اعلی پنجاب کی ہدایت پر واقعے میں ملوث پولیس اہلکاروں کے خلاف ایف آئی آر درج کرکے تحقیقات شروع کر دی گئی ہے۔

وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے بھی متاثرہ خاندان کے ساتھ ہمدردی ظاہر کرکے انہیں یقین دلایا ہے کہ انہیں بہت جلد انصاف فراہم کیا جائے گا۔