جامعہ اشرفیہ : ٹک ٹاک اور سنیک ویڈیو کا استعمال حرام قرار

Share on facebook
Share on pinterest
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp

لاہور میں دیوبندی مکتب فکر کی ممتاز دینی درسگاہ جامعہ اشرفیہ نے مشہور ایپلیکشن ’’ٹک ٹاک‘‘ اور ’’سنیک ویڈیوز‘‘ کے استعمال کو حرام قرار دیدیا ہے۔

جامعہ اشرفیہ کی جانب سے جاری ہونیوالے فتویٰ میں کہا گیا ہے کہ یہ ویڈیوز بنانا اور اسے دوسروں کو فارورڈ کرنا حرام ہے۔

سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کی جانیوالی ٹک ٹاک اور سنیک ویڈیو ایپ کی گندی اور بیہودہ ویڈیوز ایمان ختم کرنیوالی چیزیں ہیں، لہذا ان ایپلی کیشنز کو استعمال کرتے ہوئے ویڈیوز بنانا اور انہیں آگے بھیجنا بھی حرام ہے۔

فتوے میں کہا گیا ہے کہ دنیا کہاں سے کہاں پہنچ چکی ہے، لیکن ہمارے ملک کے نوجوان بیہودگی پر مبنی ان ایپلی کیشنز کے باعث پستی کا شکار اور تباہ ہو رہے ہیں۔

ممتاز دینی درسگاہ کا کہنا ہے کہ لوگوں میں اس حوالے سے آگہی پھیلانے کی ضروت ہے، کہ وہ اپنی اولاد کو اس قسم کی چیزوں سے بچا کر رکھیں۔

انہوں نے کہا ہے کہہمارے نوجوان عموماً غلط اور صحیح کے استعمال میں محتاط نہیں ہوتے، لہٰذا بسا اوقات جائز کام کو بھی ناجائز اس لیے تصور کیا جاتا ہے کہ تھوڑی سے چھوٹ ملنے پر لوگوں کے ناجائز عمل اختیار کر لینے کا امکان ہوتا ہے، اس لیے ایسی صورت کو مدنظر رکھتے ہوئے دین کی رو سے کسی جائز کام کی بھی ممانعت ہوتی ہے۔