شوال کا چلغوزہ اب مارکیٹ میں دستیاب

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

شمالی وزیرستان اور بنو سے متصل ولی خیل قبیلے کو شوال میں چلغوزہ اتارنے کی اجازت مل گئی۔ اس سلسلے میں گزشتہ روز سابقہ ایم این اے محمد نظیر وزیر اور موجودہ ایم پی اے ملک شاہ محمد خان کی سربراہی میں بکاخیل منڈی میں ڈھول کی تھاپ پرایک جرگہ منعقد ہوا۔

آپریشن ضرب عضب کے بعد جب شمالی وزیرستان کے عوام نے نقل مکانی کی تو شوال میں چلغوزہ کے پہاڑوں کے مالکان کا کروڑوں روپے کا نقصان ہوا تھا کیونکہ ان کو اجازت نہیں تھی کہ اپنے علاقے کو جائے اور چلغوزہ کو اتارے۔ پہاڑوں کے مالکان نے اس کے خلاف احتجاج اور جرگے بھی کیے تھے۔

انہیں احتجاجوں اور جرگوں اور کامیاب مذاکرات کے بعد گزشتہ روز شوال کے لوگوں کو چلغوزہ اتارنے کی اجازت مل گئی جس کے بعد آج یہ لوگ سابقہ ایم این اے محمد نظیر اور موجودہ ایم پی اے ملک شاہ محمد خان کی سربراہی میں شوال روانہ ہونگے۔

تحریک انصاف سے تعلق رکھنے والے صوبائی اسمبلی کے ایم پی اے شاہ محمد خان کا کہنا ہے کہ پہلے مرحلے میں یہ لوگ چلغوزہ کو دیکھیں گے اور دوسرے مرحلے میں اپنے ساتھ چلغوزہ اتارنے کے لیے مزدور ساتھ لے کر جائیں گے۔

ان لوگوں کا کہنا ہیں کہ آپریشن ضرب عضب کے بعد شوال کا چلغوزہ بند ہونے کی وجہ سے پورے ملک میں چلغوزہ کے مارکیٹ پربرا اثر پڑا تھا اور دوسرے ممالک کے تاجروں نے بھی آنکھیں پھیرلی تھی لیکن اب امید پیدا ہوگئی ہے کہ شوال کا چلغوزہ آنے سے مارکیٹ پراچھے اثرات مرتب ہونگے۔