محکمہ ریلیف کے تحت ضم شدہ اضلاع میں متاثرین کی معاونت کا سلسلہ جاری

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

خیبرپختونخوا کا محکمہ ریلیف کا کہنا ہے کہ قبائلی ضلع شمالی وزیرستان میں مرستہ پروگرام کے تحت متاثرین کی معاونت کا سلسلہ جاری ہے۔

میڈیا کو جاری ایک بیان میں محکمہ ریلیف کے حکام کی جانب سے کہا گیا کہ قبائلی ضلع شمالی وزیرستان میں شورش کے دوران 436 مکانات متاثر ہوئے جن میں سے 222مکانات کو مکمل طور پر جبکہ 214 مکانات کو جزوی نقصان پہنچا۔

بیان کے مطابق 436 مکانات کے لئے مرستہ پروگرام کے تحت ایک ارب 23کروڑ روپے مختص کیے گئے اور اب تک 168مکانات کے مالکان میں مرستہ پروگرام کے تحت 5 کروڑ 11 لاکھ روپے تقسیم کیے جاچکے ہیں۔

یاد رہے کہ 27 اگست کو گورنر شاہ فرمان کی زیرصدارت اپیکس کمیٹی کا اجلاس ہوا تھا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ قبائلی اضلاع میں سول انتظامیہ کو مستحکم کرنے کیلئے قانون نافذ کرنیوالے اداروں کی استعداد کار میں اضافہ اور دہشتگردی سے  متاثرہ گھروں کی تعمیر اور بحالی کیلئے معاوضوں کی ادائیگی یقینی بنائی جائیگی۔

ضم شدہ اضلاع میں شورش کے دوران تباہ شدہ مکانات کے لئے18 ارب40 کروڑ کی ادائیگیاں کر دی گئی ہیں۔38،473مکانات مکمل طور پر تباہ جبکہ 19،097 مکانات جزوی طور پر تباہ شامل ہیں۔ جس سے 57،570 خاندان مستفید ہوئے۔

تاہم دوسری جانب صوبائی حکومت مالی بحران کا شکار بھی ہے جس کی وجہ سے خیبرپختونخوا کی جامعات میں نئی بھرتیوں پر پابندی عائد کی گئی ہے.

یہاں یہ امر قابل ذکر ہےکہ 18 جون کو محکمہ ریلیف کی جانب سے ایک سوشل میڈیا پوسٹ میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ قبائلی اضلاع میں متاثرہ مکانات کے معاوضوں کیلئے 3 ارب 40 کروڑ روپے جاری کیے گئے ہیں۔

پوسٹ میں یہ دعویٰ بھی کیا گیا کہ قبائلی ضلع شمالی وزیرستان کے 4 ہزار متاثرہ مکانات کے مالان میں رقوم تقسیم کی جاچکی ہیں۔