باجوڑ میں اس سال 1859 طلباء داخلوں سے محروم

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin

پوسٹ گریجویٹ کالج میں داخلہ نہ ملنے کی وجہ سے مجھے شدید ذہنی صدمہ پہنچا اور میں نے مجبورا پرائیویٹ کالج میں داخلہ لیا، میرے والد ایک ملازم ہے گھریلو اخراجات بھی مشکل سے پورے ہورہے ہیں لیکن کیا کریں جب سرکاری کالج میں داخلہ نہیں ملا تو وقت ضائع ہونے کی وجہ سے میں نے پرائیویٹ کالج میں داخلہ لیا،

ان خیالات کا اظہار باجوڑ سے تعلق رکھنے والے ایک طالب علم سدیس خان ولد یزدانی نے ٹی این این کے ساتھ بات چیت کے دوران کیا۔

انکا کہنا تھا کہ میٹرک امتحان کیلئے انہوں نے بھرپور تیاری کی تھی اور 967 نمبر لینے کے باوجود انہیں پوسٹ گریجویٹ کالج میں داخلہ نہ مل سکا۔

ذرائع کے مطابق ضلع باجوڑ میں نہ صرف سدیس سرکاری کالج میں داخلے سے محروم رہا بلکہ سرکاری کالجز کی تعداد کم ہونے کی وجہ سے اس سال 1859 طلباء سرکاری کالجز میں داخلوں سے محروم رہ گئے۔

نمائندہ ٹربل پریس کے مطابق اس سال گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج خار میں داخلے کے لیے 1750 طلباء نے فارمز جمع کئے جس میں مارننگ اور ایوننگ شفٹس میں 920 طالبعلموں کو داخلہ ملا جبکہ 830 داخلے سے محروم رہ گئے۔

اس حوالے سے گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج خار کے پروفیسر سالم جان کا کہنا تھا کہ کالج میں اساتذہ کی کمی بھی ایک بہت بڑا مسئلہ ہے۔ انہوں نے کہا انہوں نے طلباء کا وقت ضائع ہونے سے بچانے کے لیے کالج میں سکینڈ شفٹ کی کلاسز بھی شروع کیا ہے جس کے لیے انہوں نے پرائیویٹ اساتذہ کو بھرتی کیا ہے جو ان طالبعلموں کو پڑھاتے ہیں۔

پروفیسر سالم جان کے مطابق ضلع باجوڑ کے ساتھ ملحقہ علاقہ ضلع دیر لوئرکی آبادی تقریبا نو لاکھ ہے یہاں یونیورسٹی آف ملاکنڈ سمیت 9 ڈگری کالجز35 ہائر سیکنڈری سکولز موجود ہیں جبکہ ضلع باجوڑ کی 11 لاکھ آبادی کے لیے 4 کالجز موجود ہیں جو کہ باجوڑ کے طلباء کے ساتھ زیادتی ہے۔

نمائندہ ٹی این این کے مطابق گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج خار میں سیکنڈ شفٹ میں پڑھنے والوں سے فیس بھی وصول کی جاتی ہے۔

مقامی طلباء کے مطابق گورنمنٹ ڈگری کالج برخلوزوں میں داخلے کے لیے 1100 طلباء نے اپلائی کیا تھا جہاں 403 کو داخلہ مل گیا جبکہ باقی داخلے سے محروم ہوگئے۔

اسی طرح گورنمنٹ ڈگری کالج نواگئی میں بھی 162 طلباء کو داخلہ نہ مل سکا، گورنمنٹ ڈگری کالج نواگئی میں 412 طلباء نے داخلہ فارمز جمع کئے تھے جہاں 250 کو داخلہ مل گیا جبکہ باقی کو نہ مل سکا۔

گورنمنٹ ہائیر سکنڈری سکول گردئی میں داخلے کے لیے 350 طالبعلموں نے فارمز جمع کئے لیکن یہاں بھی 170 طلباء کو داخلہ نہیں ملا۔

ضلع باجوڑ کے طلباء نے حکومت اور محکمہ تعلیم سے مطالبہ کیا ہے ان کے لیے نئے کالجز بنائے جائیں اور موجود کالجز میں سکینڈ شفٹ شروع کیا جائے کہ انکا وقت ضائع ہونے سے بچ جائیں کیونکہ وہ تعلیم حاصل کرنا چاہتے ہیں مگرغربت کی وجہ سے پرائیویٹ تعلیمی اداروں میں پڑھنے سے قاصر ہیں۔

واضح رہے کہ باجوڑ میں کل 3 ڈگری کالجز اور ایک ہائیر سکنڈری سکول ہیں، ایک کالج زیر تعمیر ہے جبکہ منظوری کے باوجود ایک پرابھی تک کام شروع نہ ہوسکا۔